فلسفه انتظار

عنوان :  فلسفه انتظار

مترجم  :  سيد حسين حيدر زيدي

پيش لفظ

خداوند عالم نے جب انسان کو پيدا کيا تو اس کي مرضي يہ تھي کہ انسان ھدايت کي شاھراہ پر گامزن اور ضلالت و گمراھي کے راستوں سے دور رھے? اسي بنا پر خداوند عالم نے اس روئے زمين پر سب سے پہلے جس انسان کو بھيجا اس کو "رھبر" بنا کر بھيجا? تاکہ بعد ميں آنے والے رھبر کي تلاش ميں سرگرداں نہ رھيں?
رھبر کے ساتھ ساتھ خداوند عالم نے ايک ايسا جامع نظام حيات بھي بھيجا جس کے تمام قانون فطرت کي بنياد پر بنائے گئے ھيں، تاکہ قوانين پر عمل کرنے ميں کوئي دشواري پيش نہ آئے? يہ قوانين فطرت کے سانچے ميں اس لئے ڈھالے گئے کہ ان پر عمل کرنے کے لئے بس ضمير کي آواز کافي ھو اور رھبروں کي ذمہ داري توجہ دلانا ھو ?? اس حقيقت کي طرف مولائے کائنات (ع) نے نہج البلاغہ ميں ارشاد فرمايا ھے: ??
انبياء اس لئے مبعوث کيے گئے تاکہ وجود انساني ميں عقل کے پوشيدہ خزانوں کو سامنے لاسکيں"?
جس وقت سے زمين آباد ھوئي ھے اس وقت سے آج تک کبھي ايسا نہيں ھوا کہ پوري زمين پر اللہ کي حکمراني ھو، اور بس اسي کا قانون چل رھا ھو? ھاں جناب سليمان عليہ السلام کے زمانے ميں ضرور کچھ دن دنيا پر اللہ کے قوانين کي حکومت تھي? کچھ دن اس مدّت کے مقابلہ ميں لکھا گيا جب ال?ہي احکام کا نفاذ نہيں تھا?
ايک طرف ھم يہ ديکھ رھے ھيں کہ شيطان کي مسلسل کوشش يہ ھے کہ ال?ہي احکام نافذ نہ ھونے پائيں? ھدايت کي شاھراہ کے بجائے انسان ضلالت کي واديوں ميں ھاتھ پير مارتا رھے اور اسي حالت ميں جان دے دے?
ھم يہ ديکھتے ھيں کہ گمراہ کرنے کا جو منصوبہ شيطان نے بنايا تھا وہ اس ميں کافي حد تک کامياب رھا اور آج تک ال?ہي احکام ساري دنيا پر نافذ نہ ھوسکے?
ايک مدت کے بعد خدا کے مخلص بندوں نے ايران سے شيطاني حکومت کو اکھاڑ پھينکا اور ال?ہي احکام نافذ کئے? مگر شيطان نے اس حکومت کے خلاف اتنا زيادہ پروپيگنڈہ کيا کہ نزديک کے ممالک بھي حقيقت حال سے آگاہ نہ ھوسکے اور انديشہائے دور و دراز ميں مبتلا نظر آتے ھيں?
ہاں ايک سوال يہ ھوسکتا ھے کہ کيا تک يہي صورت حال رھے گي? ساري دنيا پر اللہ کے احکام نافذ نہ ھوپائيں گے، اور شيطان کي عمل داري قائم رھے گي؟?
اگر اس سوال کا جواب مثبت ھے تو اس کا مطلب يہ نکلے گا کہ ال?ہي احکام ميں اس کي لياقت ھي نہيں کہ ساري دنيا پر ان کا نفاذ ھوسکے?
وہ لوگ جو عقيدہ? مہدويت کے قائل نہيں ھيں ان کے پاس گذشتہ سوال کا جواب ھي نہيں?
البتہ وہ افراد جو عقيدہ? مہدويت کو دل سے لگائے ھوئے ھيں، يقين کامل سے يہ بات کہتے ھيں کہ شيطان کي ساري ريشہ دوانياں پس چند روزہ ھيں، باطل کي چمک دمک وقتي ھے?
ايک دن يقيناً ايسا آئے گا جب اللہ کي آخري حجت کا ظھور ھوگا? روئے زمين پر صرف اللہ کے احکام نافذ ھوں گے? فطرت سے منحرف انسان اپني فطرت کي طرف واپس آجائے گا، انسان کا ضمير اتنا زيادہ بيدار ھوجائے گا کہ وہ انسان کو انحراف سے باز رکھے گا?
حضرت ولي عصر (عج) کے سلسلے ميں اس مختصر کتاب ميں جامع معلومات فراھم کي گئي ھيں?
اس کے پہلے ايڈيشن ميں صرف "انتظار" کا فلسفہ بيان کيا گيا تھا? ليکن اس جديد ايڈيشن ميں کئي نئے مباحث کا اضافہ کيا گيا ھے?
انتظار" بھي استاد بزرگوار آي? اللہ مکارم شيرازي مدظلہ کے قلم کي تخليق تھا اور جن نئے مباحث کا اضافہ کيا گيا ھے وہ بھي استاد بزرگوار کي گراں مايہ تصنيف "مھدي انقلابي بزرگ" سے اقتباس کيے گئے ھيں?

نام: محمد
کنيت: ابو القاسم
القاب: مھدي، صاحب الزمان، قائم، منتظر، ولي عصر، بقي? اللہ…
والد بزرگوار: حضرت امام حسن عسکري عليہ السلام
والدہ? ماجدہ: جناب نرجس خاتون
تاريخ ولادت: 15/ شعبان، 255 ھجري
جائے ولادت: سامراء (عراق)
غيبت صغري?: 260 ھجري
غيبت صغري? ميں امام عليہ السلام کے نائبين:
(1) ابو عمر عثمان بن سعيد العمري (ربيع الاول 260 - شعبان 265)
(2) ابو جعفر محمد بن عثمان بن سعيد العمري _شعبان 265 - جمادي الاولي? 305)
(3) ابو القاسم حسين بن روح النوبختي (جمادي الاولي? 305 - شعبان 326)
(4) ابوالحسن علي بن محمد السمري (شعبان 326 - شعبان 329)
329 ھجري کے بعد غيبت صغري? تمام ھوگئي?
غيبت صغري? ميں امام عليہ السلام عام نگاھوں سے پوشيدہ تھے? مگر ان نائبين کے ذريعہ امام تک رسائي ممکن تھي? يہ نائبين لوگوں کے مسائل امام کي خدمت ميں پيش کرتے تھے اور امام جواب مرحمت فرماديتے تھے? ايک نائب کے انتقال کے بعد دوسرے نائب کا تعين فرماديتے تھے? ليکن ابوالحسن السمري کے انتقال سے چند دن پہلے آپ نے توقيع ميں تحرير فرمايا کہ:
اسي ھفتہ تمھارا انتقال ھوجائے گا، تم کسي کو نائب معين نہ کرنا?????
غيبتِ کبري? شروع ھونے والي ھے، خدا کے حکم سے ظھور ھوگا? اس دوران جو ميري ملاقات کا دعوي? کرے وہ جھوٹا ھے?"
غيبت صغري? کے بعد نيابت خاصہ کا دور ختم ھوگيا? غيبت کبري? ميں نيابت عامہ کا آغاز ھوا? غيبت کبري? ميں امام نے دين کے تحفظ کي ذمہ داري کسي خاص فرد پر نہيں بلکہ عادل فقہاء پر عائد فرمائي ھے?
ايک توقيع ميں امام عليہ السلام نے ارشاد فرمايا:
جديد مسائل کے بارے ميں ھماري احاديث کے راوي (فقہاء) کي طرف رجوع کرو، کيونکہ يہ ميري طرف سے تم لوگوں پر حجت ھيں اور ميں خدا کي طرف سے ان پر حجت ھوں، ان کي بات کو رد کرنا ميري بات کا رد کرنا ھے?"
گذشتہ انبياء عليہم السلام کي شريعتيں اس لئے تحريف کا شکار ھوگئيں کہ اس وقت ايسے امين فقہاء نہ تھے ??? لائق صد آفريں ھيں وہ فقہاء جنھوں نے دين کو تحريف سے محفوظ رکھا اور ھم تک دين پہونچايا ?? اور اس اسلام دشمن دور ميں اسلام کا پرچم بلند کيے ھوئے ھيں? سلام ھو ان فقہاء پر?
جس دن ان کي ولادت ھوئي، جس دن ان کي وفات ھوئي اور جس دن وہ محشور کيے جائيں گے?
آئيے حضرت ولي عصر ارواحنا فداہ کے اقوال پر ايک نظر ڈاليں، اور ان پر عمل کرنے کي کوشش کريں?
ميرا وجود غيبت ميں بھي لوگوں کے ليے ايسا ھي مفيد ھے جيسے آفتاب بادلوں کي اوٹ سے?
ميں زمين کو عدل و انصاف سے اس طرح بھردوں گا جس طرح وہ ظلم و جود سے بھر گئي ھے?
ظھور ميں تعجيل کے لئے دعا مانگو کيونکہ اسي ميں تمھاري بھلائي ھے?
جو لوگ ھمارے اموال کو مشتبہ اور مخلوط کيے ھوئے ھيں، جو کوئي بھي اس ميں سے ذرہ برابر بلا استحقاق کھائے گا گويا اس نے اپنا شکم آگ سے پر کيا?
ميں اھل زمين کے لئے اس طرح باعثِ امان ھوں جس طرح ستارے اھل آسمان کے لئے?
ھمارا علم تمھارے سارے حالات پر محيط ھے اور تمھاري کوئي چيز ھم سے پوشيدہ نہيں ھے?
ھم تمھاري خبر گيري سے غافل نہيں ھيں اور نہ تمھاري ياد اپنےدل سے نکال سکتے ھيں?
ھر وہ کام کرو جو تمھيں ھم سے نزديک کردے اور ھر اس عمل سے پرھيز کرو جو ھمارے لئے بار خاطر اور ناراضگي کا سبب ھو?
تم ميں کوئي تقوي? اختيار کرے گا اور مستحق تک اس کا حق پہونچائے گا وہ آنے والي آفتوں سے محفوظ رھے گا?
اگر ھمارے چاھنے والے اپنے عہد و پيمان کي وفا کرتے تو ھماري ملاقات ميں تاخير نہ ھوتي? اور ھماري زيارت انھيں جلد نصيب ھوتي?
ھميں تم سے کوئي چيز دور نہيں کرتي مگر وہ جو ھميں ناگوار اور ناپسند ھيں?
نماز شيطان کو رسوا کرديتي ھے، نماز پڑھو اور شيطان کو رُسوا کرو?
تعجب ھے ان لوگوں کي نماز کيسے قبول ھوتي ھے جو سورہ انّا انرلناہ کي تلاوت نہيں کرتے?
ملعون ھے ملعون وہ شخص جو نماز مغرب ميں اتني تاخير کرے کہ تارے خوب کھل جائيں?
اور ملعون ھے، ملعون ھے وہ شخص جو نماز صبح ميں اتني تاخير کرے جب کہ تمام ستارے غائب ھوجائيں?

 

بطورِ ابتداء

آج دانش ور حضرات يہ کہتے ھوئے نظر آرھے ھيں کہ اگر دنيا کي يہي حالت رھي اور اسي رفتار سے مہلک ہتھياروں ميں اضافہ ھوتا رھا تو دنيا بہت جلد نيست و نابود ھوجائے گي? دنيا ميں کبھي امن قائم نہيں ھوسکتا?
اگر دنيا ميں امن قائم ھوسکتا ھے تو اس کي بس ايک صورت ھے اور وہ يہ کہ دنيا سے ممالک کي تقسيم اور جغرافيائي حد بندياں ختم ھوجائيں، پوري دنيا پر صرف ايک حکومت ھو اور بس يہي ايک صورت ھے جس کي بنا پر امن قائم ھوسکتا ھے? آج نہيں تو کچھ دنوں بعد ضرور يہ حقيقت بالکل واضح ھوجائے گي?
ايک سوال ذھن ميں کروٹيں ليتا ھے کہ اس عظيم حکومت کي رھبري کس کے سپرد ھو، زمام حکومت کس کے ھاتھوں ميں ھو?؟
زمامِ حکومت بس اسي کے ھاتھوں ميں ھونا چاھيئے جس نے اپنے اوپر پورا اختيار ھو، جو جذبات پر باقاعدہ مسلط ھو? جذبات ميں بہہ جانے والا، خواھشات کے سمندر ميں غرق ھوجانے والا کبھي صحيح رھبري نہيں کرسکے گا? خواھشات کا پابند ھونے کا مطلب يہي ھے کہ عدل و انصاف کا دامن اس کے ھاتھوں سے چھوٹ جائے، تو اس ميں امن کہاں قائم ھوسکتا ھے?
اگر دنيا کے عام انسان اس عظيم رھبري کي صلاحيت رکھتے ھوتے تو دنيا کب کي گہوارہ? امن بن چکي ھوتي?
ضرورت ھے ايک ايسے رھبر کي جسے ھم اصطلاحاً معصوم کہتے ھيں?
اس بات پر دنيا کے تمام مسلمان متفق ھيں کہ قبل ايک ايسے انسان کا ظھور ھوگا جو معصوم ھوگا، ساري دنيا پر اس کي حکومت ھوگي، جس کے نتيجہ يہ ميدانِ جنگ گہوارہ? امن ميں تبديل ھوجائے گا?
اختلاف صرف اس بات کا ھے کہ وہ عظيم انسان پيدا ھوچکا ھے، يا پيدا ھوگا??؟ شيعوں کا عقيدہ يہ ھے کہ وہ عظيم انسان 256 ھجري ميں اس دنيا ميں آچکا ھے، اور اس وقت وہ پردہ? غيبت ميں ھے، جس کا ھم لوگ انتظار کر رھے ھيں?
کيا ايک انسان اتنے دنوں تک زندہ رہ سکتا ھے?؟
اگر وہ زندہ ھے تو ھميں دکھائي کيوں نہيں ديتا?؟
ارادہ تو يہي تھا کہ اس مقدمہ ميں اس قسم کے سوالات کا معقول اور اطمينان بخش جواب قرآن و حديث کي روشني ميں ديا جائے مگر اس صورت ميں کتاب کافي طويل ھوجاتي? جس کي بنا پر صرف نظر کرنا پڑا? اگر توفيق خداوندي شاملِ حال رھي تو انشاء اللہ عنقريب ان موضوعات کو پيش کيا جائے گا?
ايک سوال اور ھوتا ھے، اور وہ يہ کہ:
اگر ايک امامِ غائب کا عقيدہ ايک خالص اسلامي عقيدہ ھے اور امام کا انتظار کرنا ايک عظيم عبادت ھے تو اس انتظار کا فائدہ کيا ھے? اور اس عقيدے کے اثرات انساني زندگي پر کيا ھيں?؟
اس سوال کا مفصل جواب قرآن و حديث کي روشني ميں اس کتابچے ميں ملے گا?
اس کتابچے کو استاد محترم دانشمند عالي قدر حضرت علامہ الحاج آقاي? ناصر مکارم شيرازي دام ظلہ العالي نے تحرير فرمايا ھے? آپ کا شمار "حوزہ علميہ قم" (ايران) کے صفِ اوّل کے اساتذہ کرام ميں ھوتا ھے،آپ کے جلسہ درس ميں سيکڑوں با فضل طلاب علوم شرکت کرتے ھيں، اور آپ کے سر چشمہ? علم و کمال سے اپنے لئے بقدر طرف ذخيرہ کرتے ھيں? جہاں آپ "حوزہ علميہ قم" کے طلاب علم کو معارف اسلامي سے آشنا کرتے ھيں، وھاں آپ ايران کے گوشہ و کنار ميں لوگوں کو اسلامي تعليمات سے آشنا کرانے کے لئے کثير تعداد ميں مبلغين ارسال فرمايا کرتے ھيں اور ان کے تمام مصارف خود برداشت کرتے ھيں?
حضرت استاد محترم نے سب سے پہلے ايک ايسے درسِ عقائد کي بنياد رکھي جس کي روشني ميں آج کي ترقي يافتہ اور متمدن دنيا کو اسلامي عقائد سے روشناس کرايا جاسکے? آپ نے بہت ھي ناياب انداز سے ان اعتراضات کا جواب ديا ھے جو آج کي دنيا اسلامي عقائد پر وارد کرتي ھے? يہ آپ کا شاھکار ھے کہ آپ نے اسلامي عقائد اور ديگر مذاھب کے عقائد کا تقابلي مطالعہ پيش کيا ھے، جس ميں اسلام کي برتري روزِ روشن کي طرح نظر آتي ھے اس درس کے نتيجہ ميں متعدد علمي اور فلسفي کتابيں منظر عام پر آئيں، اس کے علاوہ مختلف موضوعات پر متعدد کتابيں تحرير فرمائي ھيں جن ميں سے ھر ايک اپني جگہ مستقل حيثيت کي مالک ھے?
لاکھوں کي تعداد ميں شائع ھونے والا علمي، فلسفي، ديني اور اخلاقي ماھنامہ "مکتب اسلام" آپ ھي کي علمي کاوشوں کا نتيجہ ھے?
آپ بھي شاہ ايران کي ظالم و جابر حکومت کے ھاتھوں محفوظ نہ رھے، صرف اس لئے کہ آپ لوگوں تک اسلامي تعليمات نہ پہونچاسکيں اور آپ کا مشن ناکام ھوجائے آپ کو مختلف شھروں ميں شھر بدر کيا جاتا رھا، ليکن آپ اپنے عزم و ارادے سے ذرا بھي پيچھے نہ ھٹے بلکہ پہلے سے زيادہ عزم و استقلال کے ساتھ آگے بڑھتے رھے? آپ کي زندگي کے حالات کے لئے خود ايک مستقل کتاب کي ضرورت ھے?
ھم بارگاہ خداوندي ميں دست بدعا ھيں کہ محمد وآل محمد عليہم السلام کے تصدق ميں موصوف کو ھميشہ مصائب و مشکلات سے محفوظ رکھے، طويل عمر عنايت فرمائے، آپ کے مقاصد کو دن دوني رات چوگني ترقي نصيب ھو?
اور ھم لوگ بھي آپ کي زندگي سے کچھ سبق حاصل کرسکيں? آمين يا رب العالمين?
صاحبان نظر سے استدعا ھے کہ اگر کوئي اشتباہ ھو يا کوئي چيز باقي رہ گئي ھو، تو براہِ کرم حقير کو مطلع فرمائيں تاکہ اس کا ازالہ ھوسکے? انسان کي کمزورياں صحيح و سالم انتقاد سے دور ھوا کرتي ھيں?
خدايا! توفيق عطا فرما کہ تيري راہ ميں قدم اٹھا سکيں?
لوگوں تک تيرا پيغام پہونچاسکيں، تو ھي بہترين توفيق دينے والا ھے?

ناچيز مترجم

 

انتظار

سارے کے سارے مسلمان ايک ايسے "مصلح" کے انتظار ميں زندگي کے رات دن گذارے رھے ھيں جس کي خصوصيات يہ ھيں:?
(1) عدل و انصاف کي بنياد پر عالم بشريت کي قيادت کرنا، ظلم و جور، استبداد و فساد کي بساط ھميشہ کے لئے تہ کرنا?
(2) مساوات و برادري کا پرچار کرنا?
(3) ايمان و اخلاق، اخلاص و محبّت کي تعليم دينا?
(4) ايک علمي انقلاب لانا?
(5) انسانيت کو ايک حياتِ جديد سے آگاہ کرانا?
(6) ھر قسم کي غلامي کا خاتمہ کرنا?
اس عظيم مصلح کا اسم مبارک مھدي (عج) ھے، پيغمبر گرامي اسلام صلي اللہ عليہ وآلہ وسلم کي اولاد ميں ھے?
اس کتابچے کي تاليف کا مقصد يہ نہيں ھے کہ گزشتہ خصوصيات پر تفصيلي اور سير حاصل بحث کي جائے، کيونکہ ھر ايک خصوصيت ايسي ھے جس کے لئے ايک مکمل کتاب کي ضرورت ھے?
مقصد يہ ھے کہ "انتظار" کے اثرات کو ديکھا جائے اور يہ پہچانا جاسکے کہ صحيح معنوں ميں منتظر کون ھے اور صرف زباني دعوي? کرنے والے کون ھيں، اسلامي روايات و احاديث جو انتظار کے سلسلے ميں وارد ھوئي ھيں، يہ انتظار کو ايک عظيم عبادت کيوں شمار کيا جاتا ھے?؟

غلط فيصلے

سب سے پہلے يہ سوال سامنے آتا ھے کہ انتطار کا عقيدہ، کيا ايک خالص اسلامي عقيدہ ھے يا يہ عقيدہ شکست خوردہ انسانوں کي فکر کا نتيجہ ھے?؟ يا يوں کہا جائے کہ اس عقيدہ کا تعلق انساني فطرت سے ھے، يا يہ عقيدہ انسانوں کے اوپر لادا گيا ھے?؟
بعض مستشرقين کا اس بات پر اصرار ھے کہ اس عقيدے کا تعلق انساني فطرت سے نہيں ھے بلکہ يہ عقيدہ شکست خوردہ ذھنيت کي پيداوار ھے?
بعض مغرب زدہ ذھنيتوں کا نظريہ ھے کہ يہ عقيدہ خالص اسلامي عقيدہ نہيں ھے بلکہ يہودي اور عيسائي طرز فکر سے حاصل کيا گيا ھے?
مادّہ پرست اشخاص کا کہنا ھے ک اس عقيدے کي اصل و اساس اقتصاديات سے ھے? صرف فقيروں، مجبوروں، ناداروں اور کمزوروں کو بہلانے کے لئے يہ عقيدہ وجود ميں لايا گيا ھے?
حقيقت يہ ھے ک اس عقيدے کا تعلق انساني فطرت سے ھے اور يہ ايک خالصِ اسلامي نظريہ ھے، دوسرے نظريات کي وجہ يہ ھے کہ جن لوگوں نے اس عقيدہ کے بارے ميں اظھار رائے کيا ھے، اگر ان کو متعصب اور منافع پرست نہ کہا جاسکے تو يہ بات بہر حال ماني ھوئي ھے کہ ان لوگوں کي معلومات اسلامي مسائل کے بارے ميں بہت زيادہ محدود ھيں? ان محدود معلومات کي بنا پر يہ عقيدہ قائم کرليا ھے کہ ھم نے سب کچھ سمجھ ليا ھے اور اپنے کو اس بات کا مستحق قرار دے ليتے ھيں کہ اسلامي مسائل کے بارے ميں اظھار نظر کريں، اس کا نتيجہ وھي ھوتا ھے جسے آپ ملاحظہ فرما رھے ھيں? بديہي بات ھے کہ محدود معلومات کي بنيادوں پر ايک آخري نظريہ قائم کرلينا کہاں کي عقلمندي ھے، آخري فيصلہ کرنے کا حق صرف اس کو ھے جو مسئلے کے اطراف و جوانب سے باقاعدہ واقف ھو?
بعض لوگوں کا کہنا ھے کہ ھميں اس بات سے کوئي سروکار نہيں کہ اس عقيدے کي بنياد کيا ھے، ھمارا سوال تو صرف يہ ھے کہ اس عقيدے کا فائدہ کيا ھے؟ اور اس کے اثرات کيا ھيں؟
ھم نے جو ديکھا وہ يہ ھے کہ جو لوگ اس عقيدے کو دل سے لگائے ھوئے ھيں وہ ھميشہ رنج و محن کا شکار ھيں اور ان کي زندگياں مصائب برداشت کرتے گذرتي ھيں ذمہ داريوں کو قبول کرنے سے بھاگتے ھيں، فساد کے مقابل ہاتھ پر ہاتھ دھرے بيٹھے رھتے ھيں اور اس کي سعي و کوشش بھي نہيں کرتے کہ فساد ختم بھي ھوسکتا ھے ظلم کا ڈٹ کر مقابلہ بھي کيا جاسکتا ھے، ايسے عقيدے رکھنے والوں کو ايسي کوئي فکر ھي نہيں?
اس عقيدے کي بنياد جو بھي ھو مگر اس کے فوائد و اثرات خوش آيند نہيں ھيں يہ عقيدہ انسان کو اور زيادہ کاھل بنا ديتا ھے?
اگر ايک دانش ور کسي مسئلے ميں فيصلہ کرنا چاھتا ھے اور صحيح نظريہ قائم کرنا چاھتا ھے تو اس کے لئے ضروري ھے کہ وہ اس مسئلے کے اطراف و جوانب کا باقاعدہ مطالعہ کرے، اس کے بعد ھي کوئي صحيح نظريہ قائم ھوسکتا ھے?
آئيے پہلے ھم خود اس مسئلے کے مختلف پہلوؤں پر غور کريں کہ اس عقيدے کي بنياد کيا ھے؟ کيا واقعاً يہ عقيدہ شکست خوردہ ذھنيت کے افکار کا نتيجہ ھے؟ يا اس کي بنياد اقتصاديات پر ھے؟ يا پھر اس کا تعلق انسان کي فطرت سے ھے؟ اس عقيدے کے اثرات مفيد ھيں يا نقصان رساں؟?

انتظار اور فطرت

بعض لوگوں کا قول ھے کہ اس عقيدے کي بنياد فطرت پر نہيں ھے بلکہ انسان کے افکار پريشاں کا نتيجہ ھے اس کے باوجود اس عقيدے کي اصل و اساس انساني فطرت ھے، اس نظريے کي تعمير فطرت کي بنيادوں پر ھوئي ھے?
انسان دو راستوں سے اس عقيدے تک پہونچتا ھے? ايک اس کي اپني فطرت ھے اور دوسرے اس کي عقل? فطرت و عقل دونوں ھي انسان کو اس نظريے کي دعوت ديتے ھيں?
انسان فطري طور پر کمال کا خواھاں ھے، جس طرح سے فطري طور پر اس ميں يہ صلاحيت پائي جاتي ھے کہ وہ جن چيزوں کو نہيں جانتا ان کے بارے ميں معلومات حاصل کرے، اسي طرح وہ فطري طور پر اچھائيوں کو پسند کرتا ھے اور نيکي کو پسند کرتا ھے?
بالکل اسي طرح سے انسان ميں کمال حاصل کرنے کا جذبہ بھي پايا جاتا ھے? يہ وہ جذبہ ھے جو زندگي کے تمام شعبوں پر حاوي ھے، اسي جذبے کے تحت انسان اس بات کي کوشش کرتا ھے کہ وہ زيادہ سے زيادہ علم حاصل کرسکے کيونکہ وہ جتنا زيادہ علم حاصل کرے گا اتنا ھي زيادہ اس ميں کمال نماياں ھوگا? اسي جذبے کے تحت اس کي يہ خواھش ھوتي ھے کہ لوگوں کے ساتھ زيادہ سے زيادہ نيکي کرے، انسان فطري طور پر نيک طينت اور نيک اشخاص کو پسند کرتا ھے?
کوئي بھي يہ نہيں کہہ سکتا کہ يہ تقاضے ايک شکست خوردہ ذھنيت کا نتيجہ ھيں، يا ان کي بنياد اقتصاديات پر ھے، يا ان کا تعلق وراثت اور ترتيب وغيرہ سے ھے ھاں يہ ضرور ھے کہ وراثت اور ترتيب ان تقاضوں ميں قوت يا ضعف ضرور پيدا کرسکتي ھيں ليکن ان جذبات کو ختم کردينا ان کے بس ميں نہيں ھے کيونکہ ان کا وجود ان کا مرھونِ منّت نہيں ھے? ان تقاضوں کے فطري ھونے کي ايک دليل يہ بھي ھے کہ تاريخ کے ھر دور اور ھر قوم ميں يہ تقاضے پائے جاتے ھيں کيونکہ اگر يہ تقاضے فطري نہ ھوتے تو کہيں پائے جاتے اور کہيں نہ پائے جاتے? انساني عادتوں کا معاملہ اس کے برعکس ھے کہ ايک قوم کي عادت دوسري قوم ميں نہيں پائي جاتي، يا ايک چيز جو ايک قوم ميں عزّت کي دليل ھے وھي دوسري قوم ميں ذلّت کا باعث قرار پاتي ھے?
کمال، علم و دانش، اچھائي اور نيکي سے انسان کا لگاؤ ايک فطري لگاؤ ھے جو ھميشہ سے انساني وجود ميں پايا جاتا ھے، دنيا کي تمام اقوام اور تمام ادوار تاريخ ميں ان کا وجود ملتا ھے? عظيم مصلح کا انتظار انھيں جذبات کي معراجِ ارتقاء ھے?
يہ کيوں کر ممکن ھے کہ انسان ميں يہ جذبات تو پائے جائيں مگر اس کے دل ميں انتظار کے لئے کوئي کشش نہ ھو، انسانيت و بشريت کا قافلہ اس وقت تک کمالات کے ساحل سے ھم کنار نہيں ھوسکتا جب تک کسي ايسے مصلح بزرگ کا وجود نہ ھو?
اب يہ بات بھي واضح ھوجاتي ھے کہ يہ عقيدہ شکست خوردہ ذھنيت کا نتيجہ نہيں ھے بلکہ انساني ضمير کي آواز ھے اس کا تعلق انسان کي فطرت سے ھے?
ھم يہ ديکھتے ھيں کہ انساني بدن کا ھر حصہ انسان کے جسمي کمالات پر اثر انداز ھوتا ھے ھميں کوئي ايسا عضو نہيں ملے گا جو اس کي غرض کے پورا کرنے ميں شريک نہ ھو، ھر عضو اپني جگہ انساني کمالات کے حاصل کرنے ميں کوشاں ھے? اسي طرح روحي اور معنوي کمالات کے سلسلے ميں روحاني خصوصيات اس مقصد کے پورا کرنے ميں برابر کے شريک ھيں?
انسان خطرناک چيزوں سے خوف کھاتا ھے يہ روحاني خصوصيت انسان کے وجود کو ھلاکت سے بچاتي ھے اور انسان کے لئے ايک سپر ھے حوادث کا مقابلہ کرنے کے لئے
غصہ انسان ميں دفاعي قوت کو بڑھا ديتا ھے، تمام طاقتيں سمٹ کو ايک مرکز پر جمع ھوجاتي ھيں جس کي بناء پر انسان چيزوں کو تباہ ھونے سے بچا تا ھے اور فائدہ کو تباہ ھونے سے محفوظ رکھتا ھے، دشمنوں پر غلبہ حاصل کرتا ھے?
اسي طرح سے انسان ميں روحي اور معنوي طور پر کمال حاصل کرنے کا جذبہ پايا جاتا ھے، انسان فطري طور پر عدل و انصاف، مساوات اور برادري کا خواھاں ھے، يہ وہ جذبات ھيں جو کمالات کي طرف انسان کي رھبري کرتے ھيں? انسان ميں ايک ايسا ولولہ پيدا کرديتے ھيں، جس کي بناء پر وہ ھميشہ روحاني و معنوي مدارج ارتقاء کو طے کرنے کي فکر ميں رھتا ھے، اس کے دل ميں يہ آرزو پيدا ھوجاتي ھے کہ وہ دن جلد آئے جب ساري دنيا عدل و انصاف مساوات و برادري، صدق و صفا، صلح و مروت سے بھر جائے ظلم و جور کي بساط اس دنيا سے اٹھ جائے اور ستم و استبداد رختِ سفر باندھ لے?
يہ بات بھي سب کو معلوم ھے کہ انسان کا وجود اس کائنات سے الگ نہيں ھے بلکہ اسي نظام کائنات کا ايک حصہ ھے، يہ ساري کائنات انسان سميت ايک مکمل مجموعہ ھے جس ميں زمين ايک جزو آفتاب و ماھتاب ايک جزء اور انسان ايک جزء ھے?
چونکہ ساري کائنات ميں ايک نظام کار فرما ھے لھ?ذا اگر انساني وجود ميں کوئي جذبہ پايا جاتا ھے تو يہ اس بات کي دليل ھے کہ اس جذبے کا جواب خارجي دنيا ميں ضرور پايا جاتا ھے?
اسي بناء پر جب ھميں پياس لگتي ھے تو ھم خود بخود پاني کي تلاش ميں نکل پڑتے ھيں اسي جذبے کے تحت ھميں اس بات کا يقين ھے کہ جہاں جہاں پياس کا وجود ھے وھاں خارجي دنيا ميں پياس کا وجود ضرور ھوگا? اگر پاني کا وجود نہ ھوتا تو ھرگز پياس نہ لگتي? اگر ھم اپني کوتاھيوں کي بناء پر پاني تلاش نہ کرپائيں تو يہ اس بات کي ھرگز دليل نہ ھوگي کہ پاني کا وجود نہيں ھے، پاني کا وجود ھے البتہ ھماري سعي و کوشش ناقص ھے?
اگر انسان ميں فطري طور پر علم حاصل کرنے کا جذبہ پايا جاتا ھے تو ضرور خارج ميں اس شے کا وجود ھوگا جس کا علم انسان بعد ميں حاصل کرے گا?
اسي بنياد پر اگر انسان ايک ايسے عظيم مصلح کے انتظار ميں زندگي بسر کر رھا ھے جو دنيا کے گوشے گوشے کو عدل و انصاف سے بھر دے گا? چپہ چپہ نيکيوں کا مرقع بن جائے گا، تو يہ بات واضح ھے کہ انساني وجود ميں يہ صلاحيت پائي جاتي ھے، يہ انساني سماج ترقي اور تمدن کي اس منزلِ کمال تک پہونچ سکتا ھے تبھي تو ايسے عالمي مصلح کا انتظار انسان کي جان و روح ميں شامل ھے?
عالمي مصلح کے انتظار کا عقيدہ صرف مسلمانوں کے ايک گروہ سے مخصوص نہيں ھے بلکہ سارے مسلمانوں کا يہي عقيدہ ھے? اور صرف مسلمانوں ھي تک يہ عقيدہ منحصر نہيں ھے بلکہ دنيا کے ديگر مذاھب ميں بھي يہ عقيدہ پايا جاتا ھے?
اس عقيدے کي عموميت خود اس بات کي دليل ھے کہ يہ عقيدہ شکست خوردہ ذھنيت کا نتيجہ نہيں ھے اور نہ ھي اقتصاديات کي پيداوار ھے کيونکہ جو چيزيں چند خاص شرائط کے تحت وجود ميں آتي ھيں ان ميں اتني عموميت نہيں پائي جاتي? ھاں صرف فطري مسائل ايسي عموميت کے حامل ھوتے ھيں کہ ھر قوم و ملّت اور ھر جگہ پائے جائيں? اسي طرح سے عيقدے کي عموميت اس بات کي زندہ دليل ھے کہ اس عقيدے کا تعلق انسان کي فطرت سے ھے? انسان فطري طور پر ايک عالمي مصلح کے وجود کا احساس کرتا ھے جب اس کا ظھور ھوگا تو دنيا عدل و انصاف کا مرقع ھوجائے گي?

عالمي مصلح اور اسلامي روايات

ايک ايسي عالمي حکومت کا انتظار جو ساري دنيا ميں امن و امان برقرار کرے، انسان کو عدل و انصاف کا دلدادہ بنائے، يہ کسي شکست خوردہ ذھنيت کي ايجاد نہيں ھے، بلکہ انسان فطري طور پر ايسي عالمي حکومت کا احساس کرتا ھے? يہ انتظار ضمير انساني کي آواز ھے ايک پاکيزہ فطرت کي آرزو ھے?
بعض لوگوں کا نظريہ ھے کہ يہ عقيدہ ايک خالص اسلامي عقيدہ نہيں ھے بلکہ دوسرے مذاھب سے اس کو اخذ کيا گيا ھے، يا يوں کہا جائے کہ دوسروں نے اس عقيدے کو اسلامي عقائد ميں شامل کرديا ھے? ان لوگوں کا قول ھے کہ اس عقيدے کي کوئي اصل و اساس نہيں ھے? ديکھنا يہ ھے کہ يہ فکر واقعاً ايک غير اسلامي فکر ھے جو رفتہ رفتہ اسلامي فکر بن گئي ھے؟ يا در اصل يہ ايک خالص اسلامي فکر ھے?
اس سوال کا جواب کس سے طلب کيا جائے? آيا ان مستشرقين سے اس کا جواب طلب کيا جائے جن کي معلومات اسلاميات کے بارے ميں نہايت مختصر اور محدود ھيں? يہيں سے مصيبت کا آغاز ھوتا ھے کہ ھم دوسروں سے اسلام کے بارے ميں معلومات حاصل کريں? يہ بالکل ايسا ھي ھے جيسے کوئي شخص اس آدمي سے پاني طلب نہ کرے جو دريا کے کنارے ھے بلکہ ايک ايسے شخص سے پاني طلب کرے جو دريا سے کوسوں دُور ھے?
يہ بات بھي درست نہيں ھے کہ مستشرقين کي باتوں کو بالکل کفر و الحاد تصور کيا جائے اور ان کي کوئي بات ماني ھي نہ جائے، بلکہ مقصد صرف يہ ھے کہ "اسلام شناسي" کے بارے ميں ان کے افکار کو معيار اور حرفِ آخر تصور نہ کيا جائے? اگر ھم تکنيکي مسائل ميں علمائے غرب کا سہارا ليتے ھيں تو اس کا مطلب يہ تو نہيں کہ ھم اسلامي مسائل کے بارے ميں بھي ان کے سامنے دستِ سوال دراز کريں?
ھم علمائے غرب کے افکار کو اسلاميات کے بارے ميں معيار اس ليے قرار نہيں دے سکتے کہ ايک تو ان کي معلومات اسلامي مسائل کے بارے ميں نہايت مختصر اور محدود ھے، جس کي بنا پر ايک صحيح نظريہ قائم کرنے سے قاصر ھيں? دوسري وجہ يہ ھے کہ يہ لوگ تمام اسلامي اصول کو مادي اصولوں کي بنياد پر پرکھنا چاھتے ھيں، ھر چيز ميں مادي فائدہ تلاش کرتے ھيں? بديہي بات ھے کہ اگر تمام اسلامي مسائل کو ماديت کي عينک لگا کر ديکھا جائے تو ايسي صورت ميں اسلامي مسائل کي حقيقت کيا سمجھ ميں آئے گي?
اسلامي روايات کا مطالعہ کرنے کے بعد يہ بات واضح ھوجاتي ھے کہ "انتظار" کا شمار ان مسائل ميں ھے جن کي تعليم خود پيغمبر اسلام (ص) نے فرمائي ھے?
حضرت امام مہدي عليہ السلام کي انقلابي مہم کے سلسلے ميں روايات اتني کثرت سے وارد ھوئي ھيں کہ کوئي بھي انصاف پسند صاحبِ تحقيق ان کے "تواتر" سے انکار نہيں کرسکتا ھے? شيعہ اور سُنّي دونوں فرقوں کے علماء نے اس سلسلے ميں متعدد کتابيں لکھي ھيں اور سب ھي نے ان روايات کے "متواتر" ھونے کا اقرار کيا ھے? ھاں صرف "ابن خلدون" اور "احمد امين مصري" نے ان روايات کے سلسلے ميں شک و شبہ کا اظھار کيا ھے? ان کي تشويش کا سبب روايات نہيں ھيں بلکہ ان کا خيال ھے کہ يہ ايسا مسئلہ ھے جسے اتني آساني سے قبول نہيں کيا جاسکتا ھے?
اس سلسلہ ميں اس سوال و جواب کا ذکر مناسب ھوگا جو آج سے چند سال قبل ايک افريقي مسلمان نے مکہ معظمہ ميں جو عالمي ادارہ ھے، اس سے کيا تھا? يہ بات ياد رھے کہ يہ ارادہ وھابيوں کا ھے اور انھيں کے افکار و نظريات کي ترجماني کرتا ھے? سب کو يہ بات معلوم ھے کہ وھابي اسلام کے بارے ميں کس قدر سخت ھيں، اگر يہ لوگ کسي بات کو تسليم کرليں تو اس سے اندازہ ھوگا کہ يہ مسئلہ کس قدر اھميت کا حامل ھے اس ميں شبہ کي کوئي گنجائش نہيں ھے? اس جواب سے يہ بات بالکل واضح ھوجاتي ھے کہ حضرت امام مہدي (ع) کا انتظار ايک ايسا مسئلہ ھے جس پر دنيا کے تمام لوگ متفق ھيں، اور کسي کو بھي اس سے انکار نہيں ھے? وھابيوں کا اس مسئلہ کو قبول کرلينا اس بات کي زندہ دليل ھے کہ اس سلسلہ ميں جو روايات وارد ھوئي ھيں ان ميں کسي قسم کے شک و شبہ کي گنجائش نہيں ھے? ذيل ميں سوال اور جواب پيش کيا جاتا ھے?

حضرت امام مہدي (ع) کے ظھور پر زندہ دليليں

چند سال قبل کينيا (افريقہ) کے ايک باشندے بنام "ابو محمد" نے "ادارہ رابطہ عالم اسلامي" سے حضرت مہدي (ع) کے ظھور کے بارے ميں سوال کيا تھا?
اس ادارے کے جنرل سکريٹري "جناب محمد صالح اتغزاز" نے جو جواب ارسال کيا، اس ميں اس بات کي با قاعدہ تصريح کي ھے کہ وھابي فرقے کے باني "ابن تيميہ" نے بھي ان روايات کو قبول کيا ھے جو حضرت امام مھدي عليہ السلام کے بارے ميں وارد ھوئي ھيں? اس جواب کے ذيل ميں سکريٹري موصوف نے وہ کتابچہ بھي ارسال کيا ھے جسے پانچ جيد علمائے کرام نے مل کر تحرير کيا ھے? اس کتابچے کے اقتباسات قارئين محترم کي خدمت ميں پيش کئے جاتے ھيں: ????
عظيم مصلح کا اسم مبارک مھدي (ع) ھے? آپ کے والد کا نام "عبد اللہ" ھے اور آپ مکّہ سے ظھور فرمائيں گے? ظھور کے وقت ساري دنيا ظلم و جور و فساد سے بھري ھوگي? ھر طرف ضلالت و گمراھي کي آندھياں چل رھي ھوں گي? حضرت مہدي (ع) کے ذريعہ خداوندعالم دنيا کو عدل و انصاف سے بھر دے گا، ظلم و جور و ستم کانشان تک بھي نہ ھوگا?"
رسول گرامي اسلام (ص) کے بارہ جانشينوں ميں سے وہ آخري جانشين ھوں گے، اس کي خبر خود پيغمبر اسلام (ص) دے گئے ھيں، حديث کي معتبر کتابوں ميں اس قسم کي روايات کا ذکر باقاعدہ موجود ھے?"
حضرت مہدي (ع) کے بارے ميں جو روايات وارد ھوئي ھيں خود صحابہ? کرام نے ان کو نقل فرمايا ھے ان ميں سے بعض کے نام يہ ھيں:?
(1) علي ابن ابي طالب (ع)، (2) عثمان بن عفان، (3) طلحہ بن عبيدہ، (4) عبد الرحم?ن بن عوف، (5) عبد اللہ بن عباس، (6) عمار ياسر، (7) عبد اللہ بن مسعود، (8) ابوسعيد خدري، (9) ثوبان، (10) قرہ ابن اساس مزني، (11) عبد اللہ ابن حارث، (12) ابوھريرہ، (13) حذيفہ بن يمان، (14) جابر ابن عبد اللہ (15) ابو امامہ، (16) جابر ابن ماجد، (17) عبد اللہ بن عمر (18) انس بن مالک، (19) عمران بن حصين، (20) ام سلمہ?
پيغمبر اسلام (ص) کي روايات کے علاوہ خود صحابہ کرام کے فرمودات ميں ايسي باتيں ملتي ھيں جن ميں حضرت مہدي (ع) کے ظھور کو باقاعدہ ذکر کيا گيا ھے? يہ ايسا مسئلہ ھے جس ميں اجتہاد وغيرہ کا گذر نہيں ھے جس کي بناء پر بڑے اعتماد سے يہ بات کہي جاسکتي ھے کہ يہ تمام باتيں خود پيغمبر اسلام (ص) کي روايات سے اخذ کي گئي ھيں? ان تمام باتوں کو علمائے حديث نے اپني معتبر کتابوں ميں ذکر کيا ھے جيسے:?
سنن ابي داؤد، سنن ترمذي، ابن ماجہ، سنن ابن عمر والداني، مسند احمد، مسند ابن يعلي، مسند بزاز، صحيح حاکم، معاجم طبراني (کبير و متوسط)، معجم روياني، معجم دار قطني، ابو نعيم کي "اخبار المھدي"? تاريخ بغداد، تاريخ ابن عساکر، اور دوسري معتبر کتابيں?
علمائے اسلام نے حضرت مھدي (ع) کے موضوع پر مستقل کتابيں تحرير کي ھيں جن ميں سے بعض کے نام يہ ھيں:
اخبار المھدي؛ تاليف: ابو نعيم
القول المختصر في علامات المھدي المنتظر؛ تاليف: ابن ھجر ھيثمي
التوضيح في تواتر ماجاء في المنتظر والد جال والمسيح؛ تاليف: شوکاني
المھدي؛ تاليف: ادريس عراقي مغربي
الوھم المکنون في الرد علي ابن خلدون؛ تاليف: ابو العباس بن عبد المومن المغربي
مدينہ يوني يورسٹي کے وائس چانسلر نے يوني ورسٹي کے ماھنامہ ميں اس موضوع پر تفصيل سے بحث کي ھے، ھر دور کے علماء نے اس بات کي باقاعدہ تصريح کي ھے کہ وہ حديثيں جو حضرت مھدي (ع) کے بارے ميں وارد ھوئي ھيں وہ متواتر ھيں جنھيں کسي بھي صورت سے جھٹلايا نہيں جاسکتا? جن علماء نے حديثوں کے متواتر ھونے کا دعوي? کيا ھے ان کے نام اور کتابوں کے نام حسب ذيل ھيں، جن ميں تواتر کا ذکر کيا گيا ھے:?
1? السخاوي اپني کتاب فتح المغيث ميں
2? محمد بن السناديني اپني کتاب شرح العقيدہ ميں
3? ابو الحسن الابري اپني کتاب مناقب الشافعي ميں
4? ابن تيميہ اپنے فتوؤں ميں
5? سيوطي اپني کتاب الحاوي ميں
6? ادريس عراقي مغربي اپني کتاب المھدي ميں
7? شوکاني اپني کتاب التوضيح في تواتر ماجاء ميں
8? شوکاني اپني کتاب في المنتظر والدجال والمسيح ميں
9? محمد جعفر کناني اپني کتاب نظم المتناثر ميں
10? ابو العباس عبد المومن المغربي اپني کتاب الوھم المکنون ميں
ھاں ابن خلدون نے ضرور اس بات کي کوشش کي ھے کہ ان متواتر اور ناقابل انکار حديثوں کو ايک جعلي اور بے بنياد حديث لا مھدي الا عيسي? (حضرت عيسي? کے علاوہ اور کوئي مھدي نہيں ھے) کے ھم پلّہ قرار دے کر ان حديثوں سے انکار کيا جائے? ليکن علمائے اسلام نے اس مسئلہ ميں ابن خلدون کے نظريے کي باقاعدہ ترديد کي ھے خصوصاً ابن عبد المومن نے تو اس موضوع پر ايک مستقل کتاب الوھم المکنون تحرير کي ھے? يہ کتاب تقريباً 30 برس قبل مشرق اور مغرب ميں شائع ھوچکي ھے?
حافظان حديث اور ديگر علمائے کرام نے بھي ان حديثوں کے متواتر ھونے کي صراحت فرمائي ھے?
ان تمام باتوں کي بنا پر ھر مسلمان پر واجب ھے کہ وہ حضرت مھدي کے ظھور پر ايمان و عقيدہ رکھے? اھل سنت والجماعت کا بھي يہي عقيدہ ھے اور ان کے عقائد ميں سے ايک ھے?
ھاں وہ اشخاص تو ضرور اس عقيدے سے انکار کرسکتے ھيں جو روايات سے بے خبر ھيں، يادين ميں بدعت کو رواج دينا چاھتے ھيں، (ورنہ ايک ذي علم اور ديندار کبھي بھي اس عقيدے سے انکار نہيں کرسکتا?)"
سکريٹري انجمن فقہ? اسلامي
محمد منتصر کناني
اس جواب کي روشني ميں يہ بات کس قدر واضح ھوجاتي ھے کہ حضرت مھدي (ع) کے ظھور کا عقيدہ صرف ايک خالص اسلامي عقيدہ ھے کسي بھي دوسرے مذھب سے يہ عقيدہ اخذ نہيں کيا گيا ھے?
ايک بات ضرور قابل ذکر ھے وہ يہ کہ اس جواب ميں حضرت امام مھدي (ع) کے والد بزرگوار کا اسمِ مبارک عبد اللہ ذکر کيا گيا ھے? جب کہ اھل بيت عليہم السلام سے جو روايات وارد ھوئي ھيں? ان ميں بطور يقين حضرت کے والد بزرگوار کا اسم مبارک حضرت امام حسن عسکري عليہ السلام ھے
اس شبہ کي وجہ وہ روايت ھے جس کے الفاظ يہ ھيں "اسم ابيہ اسم ابي" (ان کے والد کا نام ميرے والد کا نام ھے) جبکہ بعض دوسري روايات ميں ابي (ميرے والد) کے بجائے ابني (ميرا فرزند) ھے، صرف نون کا نقطہ حذف ھوجانے يا کاتب کي غلطي سے يہ اختلاف پيدا ھوگيا ھے? اسي بات کو "گنجي شافعي" نے اپني کتاب "البيان في اخبار صاحب الزمان" ميں ذکر کيا ھے، اس کے علاوہ
1? يہ جملہ اھل سنت کي اکثر روايات ميں موجود نہيں ھے
2? ابن ابي ليلي? کي روايت کے الفاظ يہ ھيں: اسمہ اسمي اسم ابيہ اسم ابني? (اس کا نام ميرا نام ھے، اس کے والد کا نام ميرے فرزند کا نام ھے) فرزند سے مراد حضرت امام حسن عليہ السلام ھيں?
3? اھل سنت کي بعض روايات ميں اس بات کي تصريح کي گئي ھے کہ امام زمانہ کے والد بزرگوار کا نام حسن ھے?
4? اھلبيت عليہم السلام سے جو روايات وارد ھوئي ھيں جو تواتر کي حد کو پہونچتي ھيں ان ميں صراحت کے ساتھ يہ بات ذکر کي گئي ھے کہ حضرت امام مھدي عليہ السلام کے والد بزرگوار کا اسم مبارک حسن ھے?

انتظار کے اثرات

گذشتہ بيانات سے يہ بات روشن ھوگئي کہ عظيم مصلح کا انتظار ايک فطري تقاضہ ھے اور انسان ديرينہ آرزو کي تکميل ھے? يہ عقيدہ ايک خالص اسلامي عقيدہ ھے يہ عقيدہ صرف فرقہ شيعہ سے مخصوص نہيں ھے بلکہ اسلام کے تمام فرقے اس ميں برابر کے شريک ھيں? اس سلسلے ميں جو روايات وارد ھوئي ھيں وہ "تواتر" کي حد تک پہونچي ھوئي ھيں? 1
ھاں وہ حضرات جن کي معلومات کا دائرہ محدود ھے اور ھر بات کو ماديت اور اقتصاديات کي عينک لگاکر ديکھنا چاھتے ھيں، يہ حضرات ضرور يہ بات کہہ سکتے ھيں کہ يہ ايک اسلامي عقيدہ نہيں ھے، يا يہ طرز فکر ايک شکست خوردہ ذھنيت کا نتيجہ ھے?
ايک بات باقي رہ جاتي ھے? وہ يہ کہ اگر قبول بھي کرليا جائے کہ يہ عقيدہ ايک خالص اسلامي عقيدہ ھے اور خالص اسلام کے انداز فکر کا نتيجہ ھے مگر اس عقيدے کا فائدہ کيا ھے، عظيم مصلح کے انتظار ميں زندگي بسر کرنے سے انسان کي زندگي پر کيا اثرات رونما ھوتے ھيں??؟ انسان کے طرز فکر ميں کون سي تبديلي واقع ھوتي ھے?؟
يہ عقيدہ انسان کو ايک ذمہ دار شخص بناتا ھے يا لا اُبالي؟
يہ عقيدہ انسان ميں ايک جوش پيدا کرتا ھے يا اس کے احساسات پر مايوسي کي اوس ڈال ديتا ھے?؟
انساني زندگي کو ايک نيا ساز عطا کرتا ھے يا اس کي زندگي کو بے کيف بنا ديتا ھے?؟
يہ عقيدہ انسان کو ايک ايسي قوت عطا کرتا ھے جس سے وہ مشکلات کا ڈٹ کر مقابلہ کر سکے يا انسان کو ضعيف و کمزور بنا ديتا ھے?؟
يہ بات بھي توجہ کے قابل ھے کہ ذوق اور سليقے کے مختلف ھونے کي بنا پر ھوسکتا ھے کہ ايک ھي چيز سے دو مختلف نتيجے اخذ کئے جائيں? ايک آدمي ايسے نتائج برآمد کرلے جو واقعاً مفيد اور کار آمد ھوں اور دوسرا آدمي اسي چيز سے ايسے نتائج اخذ کرے جو بے کار اور مضر ھوں? ايٹمي توانائي کو انسان ان چيزوں ميں بھي استعمال کرسکتا ھے جو حيات انساني کے لئے مفيد اور ضروري ھيں اور اسي ايٹمي توانائي کو انسانيت کي ھلاکت کے لئے بھي استعمال کرسکتا ھے بلکہ کررھا ھے?
ھي حال ان رواتيوں کا ھے جو انتظار کے سلسلے ميں وارد ھوئي ھيں جن ميں سے بعض بے خبر يا خود غرض لوگوں نے ايسے نتائج اخذ کئے ھيں جس کي بنا پر اعتراضات کي ايک ديوار قائم ھوگئي?
انتظار کے اثرات بيان کرنے سے پہلے قارئين کي خدمت ميں چند روايتيں پيش کرتے ھيں جن سے انتظار کي اھميت کا اندازہ ھوجائے گا? بعد ميں انھيں روايات کو اساس و بنياد قرار ديتے ھوئے فلسفہ? انتظار کے بارے ميں کچھ عرض کريں گے? ان روايات کا ذرا غور سے مطالعہ کيجئے تاکہ آئندہ مطالب آسان ھوجائيں?
1) ايک شخص نے حضرت امام جعفر صادق عليہ السلام سے سوال کيا? وہ شخص جو ائمہ کي ولايت کا قائل ھے اور حکومت حق کا انتظار کر رھا ھے ايسے شخص کا مرتبہ اور مقام کيا ھے?؟
امام عليہ السلام نے ارشاد فرمايا ھے: "ھو بمنزل? من کان مع القائم في فسطاطہ?" ( وہ اس شخص کے مانند ھے جو امام کے ساتھ اس ان کے خيمے ميں ھو)?
امام نے تھوڑي دير سکوت کے بعد پھرمايا:? "ھو کمن کان مع رسول اللہ"? وہ اس شخص کے مانند ھے جو رسول اللہ کے ھمراہ (جنگ ميں) شريک رھا ھو? 2
اسي مضمون کي متعدد روايتيں ائمہ عليہم السلام سے نقل ھوئي ھيں?
2) بعض روايات ميں ھے: "بمنزل? الضارب بسيفہ في سبيل اللہ?" اس شخص کے ھم رتبہ ھے جو راہ خدا ميں شمشير چلا رھا ھو? 3
3) بعض روايات ميں يہ جملہ ملتا ھے: :کمن قارع معہ بسيفہ?" 4 اس شخص کے مانند ھے جو رسول خدا (ص) کے ھمراہ دشمن کے سرپر تلوار لگا رھا ھو?
4) بعض ميں يہ جملہ ملتا ھے: "بمنزل? من کان قاعداً تحت لوائہ?" اس شخص کے مانند ھے جو حضرت مھدي عليہ السلام کے پرچم تلے ھو? 5
6) بعض روايات ميں يہ جملہ ملتا ھے:? "بمنزل? مجاھدين بين يدي رسول اللہ?" اس شخص کے مانند ھے جو پيغمبر اسلام (ص) کے سامنے راہ خدا ميں جہاد کر رھا ھو? 6
7) بعض دوسري روايتوں ميں ھے:? "بمنزل? من استشھد مع رسول اللہ" اس شخص کے مانند ھے جو خود پيغمبر اسلام صلي اللہ عليہ وآلہ وسلم کے ھمراہ درجہ? شھادت پر فائز ھوا ھو? 7
ان روايتوں ميں جو سات قسم کي تشبيہات کي گئي ھيں ان ميں غور وفکر کرنے سے انتظار کي اھميت کا باقاعدہ انداز ھوجاتا ھے اور يہ بات بھي واضح ھوجاتي ھے کہ انتظار اور جہاد ميں کس قدر ربط ھے? انتظار اور شھادت ميں کتنا گہرا تعلق ھے?
بعض دوسري روايتوں ميں ملتا ھے کہ "انتظار کرنا بہت بڑي عبادت ھے?" اس مضمون کي روايتيں پيغمبر اسلام صلي اللہ عليہ وآلہ وسلم اور حضرت علي ابن ابي طالب عليہ السلام سے نقل ھوئي ھيں? جيسا کہ پيغمبر اسلام (ص) کي ايک حديث کے الفاظ ھيں: آنحضرت صلي اللہ عليہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمايا: "افضل اعمال امتي انتظار الفرج من اللہ عزوجل"? 8
ايک دوسري روايت ميں آں حضرت صلي اللہ عليہ وآلہ وسلم سے منقول ھے: "افضل العبادة انتظار الفرج?" 9
يہ تمام روايتيں اس بات کي گواہ ھيں کہ انتظار اور جھاد ميں کتنا گہرا لگاؤ ھے? اس لگاؤ اور تعلق کا فلسفہ کيا ھے، ا سکے لئے ذرا صبر سے کام ليں?

انتظار کا مفھوم

انتظار اس حالت کو کہتے ھيں جب انسان اپني موجودہ حالت سے کبيدہ خاطر ھو اور ايک تابناک مستقبل کي تلاش ميں ھو، جيسے ايک مريض جو اپنے مرض سے عاجز آچکا ھو صحت و سلامتي کي اميد ميں رات دن کوشاں ھے، ايک تاجر جو کساد بازاري سے پريشان ھو اس کي ساري تجارت ٹھپ ھو کر رہ گئي ھو، وہ اس انتظار ميں ھے کہ کس طرح يہ کساد بازاري ختم ھو اور اس کي تجارت کو فروغ حاصل ھو، اسي اميد ميں وہ ھميشہ سعي و کو شش کرتا رھتا ھے?
انتظار کے دو پہلو ھيں، اور دونوں پہلو غور طلب ھيں:
1) منفي: انسان کا اپني موجودہ حالت سے کبيدہ خا طر ھونا?
2) مثبت: تابناک مستقبل کے لئے کو شاں رھنا?
جب تک انسان کي ذات ميں يہ دونوں پہلو نہ پائے جاتے ھوں، اس وقت تک اسے يہ کہنے کا حق نہيں ھے کہ وہ کسي کا منتظر ھے? کيونکہ جو شخص موجودہ حالت پر راضي و خوشنود ھوگا اسے مستقبل کے بارے ميں کيا فکر ھوسکتي ھے اور اگر وہ موجودہ حالت سے تو راضي نہيں ھے مگر اسے مستقبل کي بھي کوئي فکر نہيں ھے تو ايسي صورت ميں يہ شخص کس چيز کا انتظار کرے گا?
جس قدريہ دونوں پہلو انساني وجود ميں جڑ پکڑتے جائيں گے اسي اعتبار سے اس کي عملي زندگي ميں فرق پڑتا جائے گا، کيونکہ جو بات دل کي گہرائيوں ميں اتر جاتي ھے اعضاء و جوارح اپنے عمل سے اس کا اظھار ضرور کرتے ھيں?
انتظار کے دونوں پہلو انسان کي زندگي کے لئے مفيد ھيں جب انسان زمانے کي موجودہ حالت سے کبيدہ خاطر ھوگا تو اس بات کي کوشش کرے گا کہ اپنے کو ھر قسم کے گناہ سے دور رکھے، ظلم و فساد سے کنارہ کشي اختيار کرلے، جور و استبداد کے ختم کرنے کي ھر امکاني کوشش کرے? اسي کے ساتھ ساتھ نيکي کي طرف قدم بڑھا رھا ھو اپنے کو نيک صفات سے آراستہ کرنے کي فکر ميں ھو?
اب آپ خود ھي فيصلہ کرليں انتظار کا يہ مفہوم انسان سے احساس ذمہ داري کو چھين ليتا ھے يا احساس ذمہ داري کو اور بڑھا ديتا ھے? اس بيان کي روشني ميں گذشتہ روايتوں ميں ذکر شدہ باتيں کس قدر روشن ھوجاتي ھيں، انسان ميں جس قدر آمادگي پائي جاتي ھے اور جس قدر وہ اپنے کو انقلاب عظيم کے لئے تيار کرچکا ھے اسي اعتبار سے وہ فضيلت کے مرتبہ پر فائز ھے آمادگي کے مراتب کو ديکھتے ھوئے روايتوں ميں فضيلت و عظمت کو بيان کيا گيا ھے
جس طرح سے ايک جنگ ميں شرکت کرنے والوں کے مراتب مختلف ھيں کوئي وہ ھے جو رسول خدا (ص) کے ساتھ ان کے خيمے ميں ھے، کوئي جنگ کے لئے آمادہ ھورھا ھے? کوئي ميدانِ جنگ ميں کھڑا ھے، کوئي تلوار چلا رھا ھے کوئي دشمن سے برسر پيکار ھے اور کوئي جنگ کرتے کرتے شھيد ھوچکا ھے? انھيں مراتب کے اختلاف کي بنا پر جنگ ميں شرکت کرنے والوں کے ثواب اور مراتب ميں بھي اختلاف ھے?
ہي صورت ان لوگوں کي بھي ھے جو ايک عظيم مصلح کے انتظار ميں زندگي کے شب و روز گذار رھے ھيں، ايک عالمي انقلاب کي اميد لگائے ھوئے ھيں جس کے بعد دنيا امن و امان، سکون و اطمينان کا گہوارہ ھوجائے گي? ظلم و جور و استبداد کي تاريکي کافور ھوجائے گي اب جس ميں جتني آمادگي، جذبہ? فدا کاري، شوق شھادت اور عزم و استقلال پايا جاتا ھے اسي اعتبار سے روايتيں اس کے شاملِ حال ھوتي جائيں گي?
وہ شخص جو پيغمبر اسلام (ص) کے ھمراہ خيمے ميں موجود ھے وہ کبھي بھي حالات سے غافل نہيں رہ سکتا، وہ ھميشہ حالات پر نگاہ رکھے گا، ماحول کو باقاعدہ نظر ميں رکھے گا، کيوں کہ وہ ايسي جگہ پر ھے جہاں غفلت اور لاپروائي سے دامن چھڑا کر يہاں آيا ھے? اسے اس بات کا احساس ھے کہ اس کي غفلت سے کيا نتائج برآمد ھوں گے، اس کي معمولي سي چوک کس قدر تباھي اور بربادي کا پيش خيمہ ھوسکتي ھے?
وہ شخص جو ميدان جنگ ميں برسرِ پيکار ھے اسے کس قدر ھوشيار ھونا چاھئے، معمولي سے معمولي چيز سے بھي فائدہ اٹھانا چاھئے، ھر لمحہ کو غنيمت شمار کرنا چاھئے? فتح حاصل کرنے کے لئے ھر امکاني کوشش کرني چاھيئے، اگر يہي شخص غافل ھوجائے، فرصت سے استفادہ نہ کرے، لمحات کو غنيمت نہ شمار کرے اس کا لازمي نتيجہ ھزيمت اور شکست ھوگي?
ہي صورت ان لوگوں کي ھے جو "انتظار" ميں زندگي بسر کررھے ھيں اور منتظر کو مجاھد کا جو درجہ ديا گيا ھے اس کي وجہ يہي ھے کہ منتظر کو مجاھد کي طرح ھميشہ ھوشيار رھنا چاھيئے? ماحول پر فتح حاصل کرنے کے لئے ھر امکاني کوشش کرنا چاھئے? فساد کي بساط تہ کرنے کے لئے ھميشہ کوشاں رھنا چاھيئے? تاکہ انقلاب عظيم کے مقدمات فراھم ھوسکيں?
يہ بات بھي ياد رکھنے کے قابل ھے کہ انسان اسي وقت ميدان جنگ ميں ايک بہادر اور دلير ثابت ھوگا جب باطني اور روحي طور پر بھي اس ميں شجاعت اور دليري پائي جاتي ھو ورنہ اگر دل ھي بُزدل ھے تو تيغ بُراں بھي بيکار ھے، حقيقي انتظار کرنے والے کے لئے ضروري ھے کہ اپنے کو باطني طور پر اس قدر آمادہ کرلے کہ وقتِ انقلاب اس کا شمار مجاھدين ميں ھو?
اس بيان کي روشني ميں "ھر سچّا منتظر" روايات ميں اپني جگہ ڈھونڈھ لے گا?
قارئين خود ھي فيصلہ کرليں کہ انتظار کا يہ مفہوم انساني زندگي کے لئے ضروري ھے يا نہيں، اس کے ضمير کي آواز ھے کہ نہيں?؟

انتظار، يا آمادگي

اگر ميں خود ھي ظالم اور ستم گر ھوں تو کيونکر ايسے انقلاب کا متمني ھوسکتا ھوں جس ميں ظالم اور ستم گر پہلے ھي حملے ميں نيست و نابود ھوجائيں گے?
اگر ميں خود ھي گناھگار، بدکار اور بداخلاق ھوں تو کيونکر ايسے انقلاب کي آرزو
کرسکتا ھوں جس ميں گناھگاروں کے لئے کوئي خاص گنجائش نہ ھو?
وہ فوج جو آمادہ? جنگ ھے کيونکر اس کے سپاھي غافل اور بے پروا ھوسکتے ھيں، فوج ھميشہ اس فکر ميں رھتي ھے کہ معمولي سے معمولي کمزوري کو جلد از جلد دور کيا جائے اور ھماري فوج ميں کوئي بھي ضعف باقي نہ رھے اور جو ضعف ھيں ان کي فوراً اصلاح کرلي جائے?
انسان کو جس چيز کا انتظار ھوتا ھے اسي اعتبار سے وہ خود کو آمادہ? استقبال کرتا ھے?
اگر کسي مسافر کے آنے کا انتظار ھے تو ايک قسم کي تياري ھوگي، اگر بہت ھي قريبي، اور جگري دوست آرھا ھے تو دوسرے قسم کي تيارياں ھوں گي? اور اگر کسي طالب علم کو اپنے امتحان کا انتظار ھے تو اب اس کي تيارياں ايک خاص قسم کي ھوں گي، اگر صحيح معنوں ميں اسے امتحان کا انتظار ھے، ايسا ھرگز نہيں ھے جسے امتحان کا انتظار ھو وہ گھر کي صفائي اور اس کے نظم و ضبط ميں منہمک ھو اور جسے ايک مسافر کا انتظار ھو وہ اپني کاپي، کتاب کي اصلاح اور ترتيب ميں مصروف و مشغول ھو، اب ديکھنا يہ ھے کہ ھم کس کا انتظار کر رھے ھيں اور کس انقلاب کي آس لگائے ھيں?
انقلاب -جو زمين کے کسي خطے سے مخصوص نہيں?
انقلاب -جس ميں جغرافيائي حدود کي کوئي قيد و شرط نہيں?
انقلاب  جو زندگي کے خاص شعبے ميں محدود نہيں?
انقلاب? اور اتنا عظيم انقلاب جس کي مثال تاريخ بشريت کے دامن ميں نہ ھو?
انقلاب? اور اتنا
انقلاب جو سياست کو ايک نيا رخ دے، جو علم و ھنر ميں ايک تازہ روح پھونک دے?
انقلاب جو اقتصادي الجھنوں کو دور کردے
انقلاب? جو اخلاقي قدروں کو سرفراز کردے
اب ديکھنا يہ ھے کہ ايسے انقلاب کے انتظار ميں زندگي گزارنے کے اثرات کيا ھيں? يہ بات پہلے ذکر کي جاچکي ھے کہ انتظار کے دو پہلو ھيں (1) منفي (2) مثبت
انتظار کي طرح انقلاب کے بھي دو پہلو ھيں: (1) منفي (2) مثبت
1) منفي: موجودہ حالت کو ختم کرنا، فساد و تباھي کو ان کي آخري حد تک پہونچانا?
2) مثبت: ايک جديد اور زندگي بخش نظام کو پرانے اور فرسودہ نظام کا جانشين قرار دينا?
اب جو لوگ واقعاً منتظر ھيں اور صحيح معنوں ميں ايک "عالمي انقلاب" کي اُمّيد لگائے ھوئے ھيں، صرف زباني اور خيالي جمع خرچ ميں مبتلا نہيں ھيں، تو ان لوگوں ميں کچھ صفات ضرور پائے جائيں گے ان ميں سے چند صفتيں نذر قارئين ھيں?

1) انفرادي اصلاح ? اِصلاحِ نفس

اس عظيم انقلاب کے لئے ايسے افراد کي ضرورت ھے جن کا ذھن عالمي اصلاحات کو قبول کرنے کي صلاحيت رکھتا ھے، ضرورت ھے ايسے افراد کي جو ميدان علم کے شھسوار ھوں، افکار ميں گہرائي ھو، دل ميں وسعت ھو کہ دشمن کو بھي جگہ مل سکے، ضمير زندہ اور بيدار ھو، اخلاق و مروت کے پرستار ھوں، ايسے افراد کي ضرورت ھے، جو تنگ نظر نہ ھوں، کج فکر اور کج خلق نہ ھوں، کينہ و حسد سے دور ھوں، اختلاف کي خانماں سوز آگ کو صلح و صفا و اخوت کے پاني سے بُجھا چکے ھوں?
کيوں ??? اس لئے کہ اگر کوتاہ فکر ھوں گے تو عالمي اصلاحات کو قبول کرنے سے انکار کرديں گے يا پھر اسے ايک دشوار گذار مرحلہ تصوّر کريں گے، اگر دل ميں وسعت اور قلب ميں محبّت نہ ھوگي، تو اپنے علاوہ دوسرے کے فائدے کو پسند نہيں کريں گے اگر آپس ميں نفاق اور اختلاف ھوگا تو ايک عالمي حکومت سے تعاون نہيں کريں گے، اور دنيا ميں افراتفري پھيلائيں گے?
ايسا بھي نہيں ھے کہ انتظار کرنے والے کي حيثيت صرف ايک تماشہ ديکھنے والے کي حيثيت ھو، اور اس کو انقلاب سے کوئي سروکار نہ ھو، يا تو وہ اس عالمي انقلاب کا موافق ھوگا يا پھر مخالف? کسي تيسري صورت کي گنجائش نہيں ھے?
بيدار ضمير اور روشن فکر شخص جب کبھي اس انقلاب کے بارے ميں فکر کرے گا اور اس کے نتائج پر نظر رکھے گا تو کبھي وہ مخالفين کي صف ميں نہ ھوگا، کيونکہ اس انقلاب کے اصول اس قدر فطرت اور ضمير کے نزديک ھيں کہ ھر وہ شخص جس کے پہلو ميں انسان کا دل ھے وہ ان اصولوں کو ضرور قبول کرے گا? مخالفت صرف وھي کريں گے جو ظلم و فساد کے دلدادہ ھوں، يا مظالم ڈھاتے ڈھاتے ظلم کرنا ان کي فطرت ثانيہ بن گئي ھو?
جب انسان اس "عالمي انقلاب" کے طرفداروں ميں ھوگا اور ھر انصاف پسند طرفدار ھوگا، ان لوگوں کے لئے ناگزير ھے کہ انفرادي طور پر اپني اصلاح کرليں اور نيک اعمال بجالانے کے خوگر بنيں، عمل سے زيادہ نيت ميں پاکيزگي ھو، تقوي? دل کي گہرائيوں ميں جاگزيں ھو علم و دانش سے سرشار ھو?
اگر ھم خود فکري يا عملي طور پر ناپاک ھيں تو کيونکر ايسے انقلاب کے متمني ھيں جس کي پہلي ھي لپيٹ ايسے لوگوں کو نگل جائے گي? اگر ھم خود ظالم اور ستم گر ھيں تو کيونکر ايسے انقلاب کا انتظار کررھے ھيں جس ميں ظالم اور ستم گر کے لئے کوئي جگہ نہ ھوگي?
اگر ھم خود مفسد ھيں اور فساد پھيلانے ميں لگے رھتے ھيں تو کيوں ايسے انقلاب کي اميد ميں زندگي کے شب و روز گذار رھے ھيں جس ميں مفسد اور فساد پھيلانے والے نيست و نابود ھوجائيں گے?
خود فيصلہ کرليجئے کيا اس عالمي انقلاب کا انتظار انسان کو باعمل اور باکردار بنا دينے کے لئے کافي نہيں ھے?؟ يہ انتظار کي مدّت کيا اس بات کي مہلت نہيں ھے کہ انسان آمد انقلاب سے پہلے خود اپني اصلاح کرلے اور خود کو انقلاب کے لئے آمادہ کرلے?
وہ فوج جو ايک قوم اور ملّت بلکہ ايک ملک کو ظلم و ستم سے آزادي دلانا چاھتي ھے اس کے ليے ضروري ھے کہ وہ ھميشہ مستعد رھے، اپنے اسلحوں کو پرکھ لے، اگر کوئي اسلحہ خراب ھوگيا ھے يا زنگ آلود ھوگيا ھے تو اس کي فوراً اصلاح کرلے، حفاظتي اقدام ميں کوئي کسر نہ اُٹھا رکھے، اپني چوکيوں کو مضبوط کرلے، اور جو مضبوط ھيں انھيں مضبوط تر بنالے سپاھيوں کا شمار کرلے، ان کي قوت آزمالے، ان کے جذبات کا جائزہ لے لے، جن کي ھمتيں پست ھوں ان ميں ايک تازہ روح پھونکي جائے? ھر ايک کو اس کي ھمت اور جذبہ کے مطابق کام سونپا جائے? اگر فوج ان خصوصيات کي حامل ھے تب تو اس بات کي اميد کي جاسکتي ھے کہ وہ اپنے مقاصد ميں کامياب ھوگي، ورنہ اس کے تمام دعوے جھوٹے اور تمام منصوبے محض خواب و خيال ھوں گے?
اسي طرح وہ لوگ جو اپنے کو حضرت امام زمانہ عليہ السلام کا منتظر کہتے ھيں اور يہ کہتے ھوئے فخر محسوس کرتے ھيں کہ ايک امام غائب کے انتظار ميں زندگي بسر کر رھے ھيں ان کے لئے ضروري ھے کہ وہ اپنے کو اس عالمي انقلاب کے لئے آمادہ کريں? اپنے نفوس کا خود امتحان لے ليں، اپنے جذبات کو حقائق کي کسوٹي پر پرکھ ليں، کيونکہ الخ
ايک قوم جو ھميشہ اپني اصلاح ميں منہمک ھو، نہايت شوق و ولولے کے ساتھ نيک اعمال بجا لارھي ھو، سچے جذبات اور خلوص نيت کے ساتھ کردار کے اعلي? مراتب طے کر رھي ھو وہ قوم اور سماج کس قدر عالي اور بلند ھوگا، وہ ماحول کس قدر روح افزا اور وہ فضا کس قدر انسانيت ساز ھوگي، وہ صبح کس قدر تابناک ھوگي جس ميں ايک ايسي عظيم قوم جنم لے گي? وہ قوم کوئي اور نہيں ھوگي بلکہ ھم اور آپ ھي ھوں گے بشرطيکہ متوجہ ھوجائيں اور اصلاحات ميں لگ جائيں?
يہ ھيں اس انتظار کے معني جس کے بارے ميں روايتيں وارد ھوئي ھيں، اور يہ ھے وہ "سچّا منتظر" جس کو روايت ميں "مجاھد" اور "شھيد" کا درجہ ديا گيا ھے?
ضرورت ھے ايسے افراد کي جن کے ارادے کے سامنے مصائب کا طوفان خود چکر ميں آجائے، جن کے عزم کے سامنے پہاڑ اپني جگہ چھوڑ ديں، جن کي اميد کے سامنے مايوسي کي چٹانيں پاش پاش ھوجائيں? فکر اس قدر وسيع ھوکہ آسمان اور زمين کي وسعتيں کم ھوں، اخلاق اس قدر بلند ھوکہ دشمن بھي کلمہ پڑھيں? کردار اتنا مستحکم ھوکہ ملائک بھي سجدہ ريز ھوں?

2) سماج کي اصلاح

سچّا منتظر وہ ھے جو صرف اپني اصلاح پر اکتفا نہ کرے بلکہ اس کے ليے ضروري ھے کہ دوسروں کي بھي اصلاح کي فکر کرے?
کيونکہ جس انقلاب کا انتظار ھم کررھے ھيں، اس ميں صرف جزوي اصلاحات نہيں ھوں گي بلکہ سماج کے سبھي افراد اس ميں برابر کے شريک ھوں گے، لھذا سب مل کر کوشش کريں، ايک دوسرے کے حالات سے آگاہ رھيں، ايک دوسرے کے شريک رھيں اور شانے سے شانہ ملاتے ھوئے انقلاب کي راہ پر گامزن رھيں?
جب کام سب مل کر انجام دے رھے ھوں تو اس ميں کوئي ايک دوسرے سے غافل نہيں رہ سکتا? بلکہ ھر ايک کا فريضہ ھے کہ دوسروں کا بھي خيال رکھے? اطراف و جوانب کا بھي علم رکھتا ھو، جہاں پر کوئي معمولي سي کمزوري نظر آئے، فوراً اس کي اصلاح کرے? کوئي کمي ھوتو فوراً اس کو پورا کيا جائے?
اسي بناء پر جہاں ھر انتظار کرنے والے کا يہ فريضہ ھے کہ خود کي اصلاح کرے، کردار کے جوھر سے آراستہ ھو وھاں اس کا يہ بھي فريضہ ھے کہ دوسروں کي بھي اصلاح کرے، سماج ميں اخلاقي قدروں کو اجاگر کرے?
صحيح انتظار کرنے کا يہ دوسرا فلسفہ ھے، ان باتوں کو پيش نظر رکھ کر روايات کا مطالعہ کيا جائے تو معني کس قدر صاف اور روشن ھوجاتے ھيں? منتظر کو کہيں مجاھد کا درجہ، کہيں راہ خدا ميں شمشير بکف کا درجہ، اور کہيں پر فائز بہ شھادت کا درجہ ديا گيا ھے? بديہي بات ھے اپني اصلاح يا دوسروں کي اصلاح، انفرادي زندگي کے ساتھ حيات اجتماعي کو بھي سنوارنا کس قدر دشوار گذار مرحلہ ھے? ان مراحل ميں وھي ثابت قدم رہ سکتا ھے جو عزم و عمل کا شاھکار ھو، جس کے قدم ثبات و استقلال کي آپ اپني مثال ھوں?

ايک اعتراض

دنيا کے بارے ميں ھماري معلومات محدود ھيں، اور نہ ھميں موجودہ حکم فرما نظام کي حقيقت معلوم ھے اور نہ ھم اس کے نتائج سے باخبر ھيں، اس بناء پر ھم خيال کرتے ھيں کہ ظلم و فساد ميں ابھي کچھ کمي ھے? اگر صحيح طور سے ديکھا جائے تو آج بھي دنيا فساد سے بھري ھوئي ھے آج بھي دنيا ظلم و ستم کي آما جگاہ بني ھوئي ھے"?
دنيا ميں کچھ ايسے بھي موجودہ ھيں جو ھميشہ اس فکر ميں رھتے ھيں کہ کس طرح ايک اصلاحي بات سے بھي فساد کا پہلو نکالا جائے? ان کي کوشش يہ ھوتي ھے کہ ھر چيز ميں اس کا منفي پہلو اُبھارا جائے، اصلاح کو بھي فساد کا جامہ پہنا ديا جائے، تاکہ ان کي دُکان ٹھپ نہ ھونے پائے? زير بحث مسئلہ بھي ان لوگوں کي سازش سے محفوظ نہ رہ سکا?
ان لوگوں کا کہنا ھے کہ حضرت مھدي عليہ السلام کے ظھور ميں شرط يہ ھے کہ آپ اس وقت ظھور فرمائيں گے جب دنيا ظلم و جور سے بھر چکي ھوگي، دور دور تک کہيں اچّھائيوں کا نام تک نہ ھوگا، نيکي کي شمع کوسوں دور بھي نظر نہ آتي ھوگي?
اگر ھم لوگ اصلاح کے راستے پر قدم بڑھائيں گے، ظلم و جور کو مٹانے کي کوشش ميں لگے رھيں گے تو حضرت کے ظھور ميں خواہ مخواہ تاخير ھوگي، لھذا کيوں نہ ھم لوگ مل کر فساد کي آگ کو اور بھڑکاديں، ظلم و ستم کے شعلوں کي لپک کو اور تيز کرديں، استبداد کي بھٹي کو کيوں نہ اور گرم کرديں، جو کچھ تھوڑي بہت کسر رہ گئي ھے، اسے جلد از جلد پورا کريں تاکہ حضرت کا ظھور جلد ھوسکے?
اسي اعتراض کو ان الفاظ ميں بيان کيا جاسکتا ھے:
وہ حضرات جو ظھور حضرت مھدي عليہ السلام کے انتظار ميں زندگي بسر کر رھے ھيں، انھيں يہ انتظار کوئي تقويت نہيں پہونچاتا بلکہ رھي سہي قوت ارادي کو بھي چھين ليتا ھے گنے چُنے جو نيک لوگ ھيں انھيں بھي يہ انتظار نيک باقي نہيں رھنے ديتا? فقر و فاقہ کي زندگي ميں روز بہ روز اضافہ ھي ھوتا چلا جاتا ھے، کيونکہ جو لوگ کم مايہ اور فقير ھيں وہ اس اميد ميں ھاتھ پر ھاتھ دھرے بيٹھے ھيں کہ جب حضرت کا ظہور ھوگا، اس وقت ھماري حالت "خود بخود" بدل جائے گي، فقر و فاقہ دور ھوجائے گا، زندگي کا ايک حصہ تو گذر چکا ھے بقيہ بھي اسي اميد ميں گذر جائے گا? سرمايہ داروں کو تو چاندي ھوجائے گي? وہ اسي بہانے اپني تجورياں بھرتے چلے جائيں گے، لوگوں کو اپنا دست نگر بنانے ميں کامياب ھوتے رھيں گے? يہ عقيدہ انساني زندگي کے لئے آبِ حيات ھے يا صحيح معنوں ميں زھر ھلاھل?؟
يہ ھے وہ اعتراض جسے مخالفين کافي آب و تاب سے بيان کرتے ھيں? ھوسکتا ھے
خود دل سے اس اعتراض کو قبول نہ کرتے ھوں، مگر اپنے ناپاک مقاصد کے لئے، اپني شخصيت کو چھپانے کے لئے اس اعتراض کو "بطور نقاب" استعمال کرتے ھوں?
جو بھي صورت حال ھو، اس اعتراض کے جواب کے لئے ان باتوں کي طرف توجہ فرمايئے:

1? صف بندي اور تشخيص

اس عالمي انقلاب ميں يا تو لوگ موافقين کي فہرست ميں مليں گے يا پھر مخالفين کي فہرست ميں، تماشائي کي حيثيت کوئي معني نہيں رکھتي ھے? دنيا ميں جتنے بھي انقلاب آتے ھيں سب کي صورت حال يہي ھے? کيونکہ دنيا ميں جتنے بھي انقلاب آئے ھيں وہ دو صورتوں سے خالي نہيں ھيں? انقلاب سماج کے لئے فائدہ مند ھوگا يا فائدہ مند نہيں ھوگا اگر انقلاب سماج کے لئے فائدہ مند ھے تو ھر آدمي کا فريضہ ھے کہ اس ميں شرکت کرے، اگر يہ انقلاب سماج کے لئے نقصان کا باعث ھے تو سب کا فريضہ ھے کہ مل کر اس کي مخالفت کريں اور اس کو کامياب نہ ھونے ديں? يہ بات دور از عقل ھے کہ انقلاب تو آئے ليکن سماج کے لئے نہ فائدہ مند ھو نہ باعثِ نقصان?
جب يہ بات تو ھميں چاھيئے کہ ھم ابھي سے يہ طے کرليں کہ ھميں کس صف ميں رھنا ھے ھم اپنے کو خود آزماليں کہ ھميں کس کا ساتھ دينا ھے?
اگر آج ھم فساد کي آگ کو ھوا دے رھے ھيں تو کل کيونکر اصلاح کرنے والوں کي صف ميں آجائيں گے اور فساد کو آگ بجھا رھے ھوں?؟ اگر آج ھمارا دامن ظلم و جور سے آلودہ ھوگا تو کل يقيناً ھمارا شمار مخالفين کي فہرست ميں ھوگا? کيونکہ يہ بات تو سبھي تسليم کرتے ھيں کہ حضرت مھدي عليہ السلام کے ظھور کے بعد جو انقلاب آئے گا اس ميں ظلم و جور کا نشان تک باقي نہ رھے گا? ھم کو ان ظالموں کي صف ميں اپنے کو شمار کرنا چاھئے جن کي گردنوں کا بوسہ عدل و انصاف کي شمشير لے گي? فساد پھيلانا تو بالکل ايسا ھي ھے کہ ھم ايک ايسي آگ بھڑکائيں جس کا پہلا شعلہ ھميں ھي خاکستر کردے?
اگر اس اعتراض کو قبول بھي کرليا جائے تو اس کا مطلب يہ ھوگا کہ ھم جس قدر اپنے اعمال بد کے ذريعہ حضرت مھدي عليہ السلام کے ظھور کو نزديک کريں گے اتنا ھي ھم اپني نابودي اور فنا سے بھي قريب تر ھوجائيں گے، اپنے ھي ھاتھوں اپنے پيروں پر کلہاڑي مار ليں گے?
اگر ھم باقي رھنا چاھتے ھيں اور اس عالمي انقلاب کے نتائج سے لطف اندوز اور بہرہ مند ھونا چاھتے ھيں تو اپنے دامن کو آلودگيوں سے دور رکھيں، ظلم و جور سے تمام رشتوں کو توڑديں، ضلالت و گمراھي کے سمندر سے نکل کر ھدايت کے ساحل پر آجائيں?

2? مقصد آمادگي ھے، فساد نہيں

جو چيز حضرت مھدي عليہ السلام کے ظھور کو کسي حد تک نزديک کرسکتي ھے وہ ھے وہ ظلم وجور و فساد نہيں ھے بلکہ ھماري آمادگي ھے، ھمارا اشتياق ھے? کيا ھميں حضرت کا اسي طرح انتظار ھے جس طرح سے ايک پياسے کو پاني کا?
ھاں يہ اور بات ھے، جس قدر ظلم و جور، فساد اور بربادي ميں اضافہ ھوتا جائے گا اتنا ھي لوگ موجودہ نظام اور ضابطہ? حيات سے عاجز ھوتے جائيں گے? رفتہ رفتہ لوگوں کو اس بات کا يقين ھوتا جائے گا کہ موجودہ ضابطہ? حيات ميں سے کوئي ايک بھي ھماري مشکلات کا حل پيش نہيں کرسکتا بلکہ جتنے بھي نظام رائج ھيں وہ سب کے سب ھماري مشکلات ميں اضافہ تو کرسکتے ھيں مگر کمي نہيں کرسکتے? يہي يقين اس بات کا سبب ھوگا کہ لوگ ايک ايسے نظام کے منتظر ھوں گے جو واقعاً ان کي مشکلات کا حل پيش کرسکتا ھے جس قدر يہ يقين مستحکم ھوتا جائے گا، اتنا ھي انسان کا اشتياق بڑھتا جائے گا?
دھيرے دھيرے يہ بات بھي روشن ھوتي جائے گي اور لوگوں کو يقين ھوتا جائے گا کہ دنيا کي جغرافيائي تقسيم مشکلات کا سر چشمہ ھے? يہي جغرافيائي تقسيم ھے جس کي بنا پر بے پناہ سرمايہ اسلحہ سازي ميں خرچ ھورھا ھے، انسان کي گاڑھي کمائي کے پيسے سے خود اس کي تباھي کے اسباب فراھم کئے جارھے ھيں? جغرافيائي تقسيم اور حد بندي کا نتيجہ ھے جس کي بنا پر ھر قوي اور طاقت ور ملک ضعيف اور فقير ملک کو اپنے قبضہ ميں کرليتا ھے? ان کے پاس جو خدا داد نعمتيں ھيں ان کو ہتھيانے کي فکر ميں لگا رھتا ھے? يہ جغرافيائي تقسيم اور حد بندي کا نتيجہ ھے جس کي بنا پر ملکوں ميں آپس ميں ايک حسد اور تعصب پايا جاتا ھے? يہي وہ باتيں ھيں جو انساني مشکلات کا سرچشمہ ھيں، جس قدر يہ حققيت انساني ذھن ميں اترتي جائے گي اتنا ھي انسان ايک ايسي حکومت کي فکر ميں ھوگا، جس ميں يہ قصّہ ھي نہ ھو، جہاں پر کوئي حد بندي نہ ھو? اگر حد بندي ھو تو صرف انسانيت اور آدميت کي? جب ايک عالمي حکومت کا قيام ھوگا تو وہ بے پناہ سرمايہ جو اسلحہ کے اوپر خرچ ھورھا ھے، وہ انسان کي فلاح و بہبود کے لئے خرچ ھوگا، اب نہ حسد کا سوال ھوگا اور نہ رقابت کا، بلکہ سب مل کر شانے سے شانہ ملاکر ھاتھ ميں ھاتھ دے کر، عدل و انصاف، صدق و صفا، برادري، اخلاص و ايثار، اخلاق و کردار، مروت و شرافت کي بنياد پر قصر آدميت و انسانيت کو تعمير کريں گے?

3? تاريکي کا عُروج

دنيا تو مدت ھوئي ظلم و جور سے بھر چکي ھے? يہ جنگيں يہ قتل و غارت، لوٹ مار خوں ريزياں اس بات کي نشاني نہيں ھيں کہ دنيا ظلم و جور سے بھري ھوئي ھے? يہ کينہ و حسد ايک دوسرے کو تباہ و برباد کرنے کے لئے ايک سے ايک اسلحہ بنانا، طاقت کے گھمنڈ ميں غريبوں اور کمزوروں کو کچل کے رکھ دينا، دنيا سے اخلاقي قدروں کو مٹ جانا جہاں کردار کي بھيک مانگے سے نہ ملتي ھو، جہاں شرم و حيا نام کي کوئي چيز نہ ھو تو اب بھي ظلم و جور ميں کوئي کمي باقي رہ جاتي ھے?؟
ھاں جس چيز کي کمي ھے وہ يہ ھے کہ ھم ابھي تک موجودہ نظام ھائے حکومت کي حقيقتوں سے واقف نہيں ھوئے ھيں، ابھي ھم ان ضابطہ? حيات کے نتائج سے باقاعدہ آگاہ نہيں ھوئے? ابھي تک يہ بات بالکل روشن نہيں ھوئي ھے کہ واقعاً ھماري مشکلات کا سرچشمہ کيا ھے، جس کي بناء پر ھم اپنے وجود ميں اس جذبے کا احساس نہيں کرتے جو ايک پياسے کو پاني کا ھوتا ھے، ايک مريض کو شفا کي آرزو?
جس قدر ھمارے جذبات ميں اضافہ ھوتا جائے گا، جتنا ھم ميں آمادگي پيدا ھوتي جائے گي، جس قدر حضرت (ع) کے ظھور کي ضرورت اور عالمي انقلاب کا احساس ھوتا جائے گا، اتنا ھي حضرت کا ظھور نزديک ھوتا جائے گا?

4? سچّا منتظر کون?؟

انتظار کے اثرات و فوائد ميں سے دو کا ذکر کيا جاچکا ھے? 10 انفرادي اصلاح يا اصلاح نفس (2) سماج کي اصلاح?
انتظار کے اثرات صرف انھيں دو ميں منحصر ھيں بلکہ اور بھي ھيں، ان ميں سے ايک اور قارئين کي خدمت ميں پيش کيا جاتا ھے?
جس وقت فساد وباکي طرح عام ھوجائے گا، ھر طرف فساد ھي فساد نظر آئے، اکثريت کا دامن فساد سے آلودہ ھو، ايسے ماحول ميں اپنے دامن کو فساد سے محفوظ رکھا ايک سچّے اور حقيقي منتظر کا کام ھے? يہ وہ موقع ھوتا ھے جس وقت نيک اور پاک سيرت افراد روحي کش مکش ميں مبتلا ھوجاتے ھيں? کبھي بھي يہ خيال ذھنوں ميں کروٹيں لينے لگتا ھے کہ اب اصلاح کي کوئي اميد نہيں ھے? يہ مايوسي کردار کے لئے ايک مہلک زھر ثابت ھوسکتي ھے? انسان يہ خيال کرنے لگتا ھے کہ اب اصلاح کي کوئي اميد نہيں ھے، اب حالات سدھرنے والے نہيں ھيں، اب کوئي تبديلي واقع نہيں ھوئي، بلکہ حالات بد سے بدتر ھوجائيں گے، ايسي صورت ميں اگر ھم اپنے دامن کردار کو بچائے بھي رکھيں تو اس کا کيا فائدہ جب کہ اکثريت کا دامن کردار گناھوں سے آلودہ ھے? اب تو زمانہ ايسا آگيا کہ بس "خواھي نشويد رسوا ھم رنگ جماعت باش"?? اگر رسوائي اور بدنامي سے بچنا چاھتے ھو تو جماعت کے ھم رنگ ھوجاؤ?
ھاں! اگر کوئي چيز ان لوگوں کو آلودہ ھونے سے محفوظ رکھ سکتي ھے اور ان کے دامن کردار کي حفاظت کرسکتي ھے تو وہ صرف يہي عقيدہ کہ ايک دن آئے گا جب حضرت مھدي سلام اللہ عليہ کا ظھور ھوگا اور دنيا کي اصلاح ھوگي جيسا کہ رسول گرامي (ص) کا ارشاد ھے: "اگر آنے ميں صرف ايک ھي دن باقي رہ جائے گا تو خداوند عالم اس دن کو اس قدر طولاني کردے گا کہ حضرت مھدي سلام اللہ عليہ کا ظھور ھوجائے"? (1) جب ايک دن اصلاح ھوگي اور ضرور ھوگي تو کيوں نہ ھم اپنے دامن کردار کو محفوظ رکھيں، دوسروں کي اصلاح کي فکر کيوں نہ کريں? اس سعي و کوشش کي بنا پر ھم اس لائق ھوسکيں گے کہ وقت انقلاب موافقين کي صف ميں ھوں اور ھمارا بھي شمار حضرت کے اعوان و انصار ميں ھو?
تعليماتِ اسلامي ميں يہ بات بھي ملتي ھے کہ سب سے عظيم گناہ اگر کوئي چيز ھے تو وہ "رحمت ال?ہي سے مايوسي ھے"? اس کي وجہ بھي صاف واضح ھے? جب انسان رحمتِ ال?ہي سے مايوسي ھوجائے گا تو کبھي بھي اصلاح کي فکر نہيں کرے گا? وہ يہي خيال کرے گا کہ جب کافي عمر گناہ کرتے گزري تو اب چند دنوں کے لئے گناہ سے کنارہ کشي اختيار کرنے سے کيا فائدہ? جب ھم گناھوں کے بوجھ سے دبے ھوئے ھيں تو کيا ايک اور کيا دس? اب تو پاني سر سے اونچا ھوچکا ھے، ساري دنيا ميں بدنامي ھوچکي، اب کاھے کي پرواہ، اپنے اعمال کے ذريعہ دوزخ خريد چکا ھوں? جب آتش جہنم ميں جلنا ھے تو باقاعدہ جليں گے اب ڈر کس بات کا?
اگر انسان کي ساري عمر گناہ کرتے گزري ھو، اور اسے اس بات کا يقين ھو کہ ميرے گناہ يقيناً بہت زيادہ ھيں، ليکن رحمتِ ال?ہي اس سے بھي زيادہ وسيع ھے? ميرے لاکھ گناہ سھي مگر اس کي رحمت کے مقابلے ميں کچھ بھي نہيں، اس کي ذات سے ھر وقت اميد ھے، اگر ميں سدھر جاؤں تو وہ آج بھي مجھے بخش سکتا ھے? اگر ميں اپنے کئے پر نادم ھوجاؤں تو اس کي رحمت شامل حال ھوسکتي ھے? يہي وہ تصور اور عقيدہ ھے جو انسان کي زندگي ميں ايک نماياں فرق پيدا کرسکتا ھے، ايک گناھگار کو پاک و پاکيزہ بنا سکتا ھے?
اسي لئے تو کہا جاتا ھے کہ اميد انساني زندگي کے لئے بہت ضروري چيز ھے? اميد کردار سازي ميں ايک مخصوص درجہ رکھتي ھے? اصلاح کي اميد فساد کے سمندر ميں غرق ھونے سے بچا ليتي ھے، اصلاح کي اميد انساني کردار کے لئے ايک مستحکم سپر ھے?
جس قدر دنيا فاسد ھوتي جائے گي اسي اعتبار سے حضرت کے ظھور کي اميد ميں اضافہ ھوتا جائے گا، جس قدر يہ اميد بڑھتي جائے گي اسي اعتبار سے انفرادي اور اجتماعي اصلاح ھوتي جائے گي? ايک صالح اور با کردار اقليت کبھي بھي فسادي اکثريت کے سمندر ميں غرق نہيں ھوگي?
يہ ھے انتظار کا وہ فائدہ جو کردار کو فاسد ھونے سے محفوظ رکھتا ھے، ايک سچّے اور با کردار منتظر کا دامنِ عفت گناھوں سے آلودہ نہيں ھوگا?

مختصر يہ کہ

اگر انتظار کو صحيح معنوں ميں پيش کيا جائے تو انتظار انسان کي زندگي کے ليے بہت ضروري ھے? اخلاقي قدروں کو اجاگر رکھنے کا ايک بہترين ذريعہ ھے? انتظار بے حس انسان کو ذمہ دار بنا ديتا ھے? بے ارادہ انسانوں کو پہاڑوں جيسا عزم و استقلال عطا کرتا ھے?
ھاں اگر انتظار کے مفھوم کو بدل ديا جائے، اس کي غلط تفسير کي جائے تو اس صورت ميں انتظار ضرور ايک بے فائدہ چيز ھوگي?
انتظار کبھي بھي انسان کو بے عمل نہيں بناتا? اور نہ بد اعمالي کي دعوت ديتا ھے، اس بات کي زندہ دليل وہ روايت ھے جو اس آيتہ کريمہ کے ذيل ميں وارد ھوئي ھے: وَعدَ اللہُ الَّذِي?نَ ا?مَنُو?ا مِن?کُم? وَ عَمِلُو?ا الصّ?لِح?تِ لِيَس?تَخ?لِفَنَّھُم? في الارض "وہ لوگ جو ايمان لائے ھيں اور عمل صالح بجالاتے ھيں ان سے خدا کا يہ وعدہ ھے کہ خدا ان کو روئے زمين پر حکومت عطا کرے گا?" امام عليہ السلام نے ارشاد فرمايا: اس آيت سے مراد القائم واصحابہ 10 اس سے مراد حضرت مھدي (ع) اور ان کے اصحاب ھيں?
ايک دوسري روايت ميں ھے نزلت في المھدي 10 يہ آيتہ کريمہ حضرت مھدي کي شان ميں نازل ھوئي ھے?
غور طلب بات يہ ھے کہ اس آيتہ کريمہ ميں جو حضرت کے اصحاب کي صفت بيان کي گئي ھے ان ميں ايک ايمان ھے اور دوسرا عمل صالح
قيناً اس عالمي انقلاب کے لئے ايسے افراد کي ضرورت ھے جن کے ايمان پختہ ھوں، عقائد مستحکم ھوں، عقيدے کي ھر منزل کامل ھو، عمل کے ميدان ميں مرد ميداں ھوں? جو لوگ ابھي انتظار کي گھڑياں گذار رھے ھيں، ان ميں گزشتہ باتوں کا پايا جانا ضروري ھے اور جن ميں يہ صفات موجود ھوں گے وھي سچّے منتظر ھوں گے?
وہ لوگ جن کے ايمان کامل نہيں ھيں يا عمل صالح ميں کورے ھيں تو وہ ظھور سے پہلے اپني اصلاح کرليں ورنہ بغير اصلاح کئے ھوئے اگر کسي چيز کا انتظار کر رھے ھيں تو وہ بس اپني ھي فنا اور نابودي ھے?
انتظار کا حق اسے ھے جس کا دل ايمان سے لبريز ھو، جو عزم و استقلال کا مالک ھو? وہ کيا انتظار کرے گا جو ھميشہ اونگھا کرتا ھے?
سچا منتظر وہ ھے جو ھميشہ اپني اصلاح ميں لگا رھتا ھے اور اسي کے ساتھ سماجي اصلاح کي فکر ميں غرق رھتا ھے اجتماع کي فلاح و بہبود ميں ھميشہ کوشاں رھتا ھے?
ھاں يہ ھے سچا منتظر اور يہ ھيں انتظار کے حقيقي معني?

 

ظھور کي علامتيں

اس عالمي انقلاب کي کچھ علامتيں بھي ھيں کہ انتا عظيم انقلاب کب برپا ھوگا?؟
ھم اس عظيم انقلاب سے نزديک ھو رھے ھيں يا نہيں?؟
اس عظيم انقلاب کو اور قريب کيا جاسکتا ھے؟
اگر يہ ممکن ھے تو اس کے اسباب و وسائل کيا ھيں?َ
تمام سوالوں کے جواب مثبت ھيں?
دنيا ميں کوئي بھي طوفان ايکا ايکي نہيں آتا ھے? سماج ميں انقلاب رونما ھونے سے پہلے اس کي علامتيں ظاھر ھونے لگتي ھيں?
اسلامي روايات ميں اس عظيم انقلاب کي نشانيوں کا تذکرہ ملتا ھے? يہ نشانياں اور علامتيں دو طرح کي ھيں:
1) عمومي علامتيں جوھر انقلاب سے پہلے (انقلاب کے تناسب سے) ظاھر ھوتي ھيں?
2) جزئيات جن کو معمولي و اطلاع کي بنياد پر نہيں پرکھا جاسکتا ھے بلکہ ان جزئيات کي حيثيت ايک طرح کي اعجازي ھے?
ذيل کي سطروں ميں دونوں قسم کي علامتوں کا ذکر کيا جاتا ھے?

ظلم و فساد کا رواج

سب سے پہلي وہ علامت جو عظيم انقلاب کي آمد کي خبر ديتي ھے? وہ ظلم و فساد کا رواج ھے? جس وقت ھر طرف ظلم پھيل جائے، ھر چيز کو فساد اپني لپيٹ ميں لے لے? دوسروں کے حقوق پامال ھونے لگيں، سماج برائيوں کا گڑھ بن جائے اس وقت عظيم انقلاب کي آھٹ محسوس ھونے لگتي ھے? يہ طے شدہ بات ھے کہ جب دباؤ حد سے بڑھ جائے گا تو دھماکہ ضرور ھوگا يہي صورت سماج کي بھي ھے جب سماج پر ظلم و فساد کا دباؤ حد سے بڑھ جائے گا تو اس کے نتيجہ ميں ايک انقلاب ضرور رونما ھوگا?
اس عظيم عالمي انقلاب اور حضرت مھدي (عج) کے ظھور کے بارے ميں بھي بات کچھ اسي طرح کي ھے?
منفي انداز فکر والوں کي طرح يہ نہيں سوچنا چاھيے کہ ظلم و فساد کو زيادہ سے زيادہ ھوا دي جائے تاکہ جلد از جلد انقلاب آجائے بلکہ فساد اور ظلم کي عموميت کو ديکھتے ھوئے اپني اور دوسروں کي اصلاح کي فکر کرنا چاھيے، تاکہ صالح افراد کي ايک ايسي جماعت تيار ھوسکے جو انقلاب کي علمبردار بن سکے?
اسلامي روايات ميں اس پہلي علامت کو ان الفاظ ميں بيان کيا گيا ھے:?
کما ملئت ظلما وجوراً …" جس طرح زمين ظلم و جور سے بھر چکي ھوگي يہاں ايک سوال يہ اٹھتا ھے کہ "ظلم و جور" مترادف الفاظ ھيں يا معاني کے اعتبار سے مختلف?
دوسروں کے حقوق پر تجاوز دو طرح ھوتا ھے?
ايک يہ کہ انسان دوسروں کے حقوق چھين لے اور ان کي محنت سے خود استفادہ کرے اس کو "ظلم" کہتے ھيں?
دوسرے يہ کہ دوسروں کے حقوق چھين کر اوروں کو دے دے، اپنے اقتدار کے استحکام کے لئے اپنے دوستوں کو عوام کے جان و مال پر مسلط کردے اس کو "جور" کہتے ھيں?
ان الفاظ کے مد مقابل جو الفاظ ھيں وہ ھيں ظلم کے مقابل "قسط" اور جور کے مقابل "عدل" ھے?
اب تک بات عمومي سطح پر ھورھي تھي کہ ھر انقلاب سے پہلے مظالم کا وجود انقلاب کي آمد کي خبر ديتا ھے?
قابل غور بات تو يہ ھے کہ اسلامي روايات نے سماجي برائيوں کي جزئيات کي نشاندھي کي ھے? يہ باتيں اگر چہ 12? 13سو سال پہلے کہي گئي ھيں ليکن ان کا تعلق اس زمانے سے نہيں ھے بلکہ آج کل ھماري دنيا سے ھے? يہ جزئيات کچھ اس طرح بيان کيے گئے ھيں گويا بيان کرنے والا اپني آنکھوں سے ديکھ رھا ھو، اور بيان کررھا ھو? يہ پيشين گوئياں کسي معجزے سے کم نہيں ھيں?
اس سلسلے ميں ھم متعدد روايتوں ميں سے صرف ايک روايت کو ذکر کرتے ھيں? يہ روايت حضرت امام جعفر صادق عليہ السلام سے نقل ھوئي ھے? اس روايت ميں سياسي، سماجي اور اخلاقي مفاسد کا ذکر کيا گيا ھے?
حضرت امام جعفر صادق عليہ السلام نے اپنے بعض اصحاب سے ارشاد فرمايا ھے:
1? جس وقت تم يہ ديکھو کہ ھر طرف ظلم و ستم پھيل رھا ھے?
2? جس وقت تم يہ ديکھو کہ قرآن فرسودہ کرديا گيا ھے اور دين ميں بدعتيں رائج کردي گئي ھيں?
3? جس وقت تم يہ ديکھو کہ دين خدا اس طرح اپنے مفاھيم سے خالي ھوگيا ھے جس طرح برتن الٹ ديا گيا ھو?
4? جس وقت تم يہ ديکھو کہ اھل باطل صاحبانِ حق پر مسلط ھوگئے ھيں?
5? جس وقت تم يہ ديکھو کہ مرد مرد پر اور عورتيں عورتوں پر اکتفا کر رھي ھيں?
6? جس وقت تم يہ ديکھو کہ صاحبانِ ايمان سے خاموشي اختيار کرلي ھے?
7? جس وقت تم يہ ديکھو کہ چھوٹے بڑوں کا احترام نہيں کر رھے ھيں?
8? جس وقت تم يہ ديکھو کہ رشتہ دارياں ٹوٹ گئي ھيں?
9? جس وقت تم يہ ديکھو کہ چاپلوسي کا بازار گرم ھے?
10? جس وقت تم يہ ديکھو کہ شراب اعلانيہ پي جارھي ھے?
11? جس وقت تم يہ ديکھو کہ خير کے راستے اُجاڑ اور شر کي راھيں آباد ھيں?
12? جس وقت تم يہ ديکھو کہ حلال کو حرام اور حرام کو حلال کيا جارھا ھے?
13? جس وقت تم يہ ديکھو کہ احکامِ دين کي حسبِ منشا تفسير کي جارھي ھے?
14? جس وقت تم يہ ديکھو کہ صاحبان ايمان ھے آزادي اس طرح سلب کرلي گئي ھے کہ وہ اپنے دل کے علاوہ کسي اور سے اظھار نفرت نہيں کرسکتے?
15 جس وقت تم يہ ديکھو کہ سرمايہ کا بيشتر حصّہ گناہ ميں صرف ھورھا ھے?
16? جس وقت تم يہ ديکھو کہ حکومتي ملازمين کے درميان رشوت عام ھوگئي ھے?
17? جس وقت تم يہ ديکھو کہ حساس و اھم منصبوں پر نااھل قبضہ جمائے ھيں?
18? جس وقت تم يہ ديکھو کہ (بعض مرد) اپني عورتوں کي ناجائز کمائي پر زندگي بسر کر رھے ھيں?
19? جس وقت تم يہ ديکھو کہ قمار آزاد ھوگيا ھے (قانوني ھوگيا ھے)
20? جس وقت تم يہ ديکھو کہ ناروا تفريحيں اتني عام ھوگئي ھيں کہ کوئي روکنے کي ھمّت نہيں کر رھا ھے?
21? جس وقت تم يہ ديکھو کہ قرآني حقائق کا سننا لوگوں پر گراں گذرتا ھے?
22? جس وقت تم يہ ديکھو کہ پڑوسي پڑوسي کي زبان کے ڈر سے اس کا احترام کر رھا ھے?
23? جس وقت تم يہ ديکھو کہ مسجدوں کي آرائش کي جارھي ھے?
24? جس وقت تم يہ ديکھو کہ غير خدا کے لئے حج کيا جارھا ھے?
25? جس وقت تم يہ ديکھو کہ عوام سنگ دل ھوگئے ھيں?
26? جس وقت تم يہ ديکھو کہ عوام اس کے حامي ھوں جو غالب آجائے (خواہ حق پر ھو خواہ باطل پر)
27? جس وقت تم يہ ديکھو کہ حلال کے متلاشي افراد کي مذمّت کي جائے اور حرام کي جستجو کرنے والوں کي مدح?
28? جس وقت تم يہ ديکھو کہ لہو و لعب کے آلات مکّہ مدينہ ميں (بھي رائج ھوں?
29? جس وقت تم يہ ديکھو کہ مسجد ان لوگوں سے بھري ھے جو خدا سے نہيں ڈرتے?
30? جس وقت تم يہ ديکھو کہ لوگوں کي ساري توجہ پيٹ اور شرمگاہ پر مرکوز ھے?
31? جس وقت تم يہ ديکھو کہ مادي اور دنياوي وسائل کي فراواني ھے، دنيا کا رخ عوام کي طرف ھے?
32? جس وقت تم يہ ديکھو کہ اگر کوئي امر بمعروف اور نہي از منکر کرے تو لوگ اس سے يہ کہيں کہ يہ تمھاري ذمہ داري نہيں ھے?
33? جس وقت تم يہ ديکھو کہ عورتيں اپنے آپ کو بے دينوں کے حوالے کر رھي ھيں?
34? جس وقت تم يہ ديکھو کہ حق پرستي کے پرچم فرسودہ ھوگئے ھيں?
35? جس وقت تم يہ ديکھو کہ بربادي آبادي پر سبقت لے جارھي ھے?
36? جس وقت تم يہ ديکھو کہ بعض کي روزي صرف کم فروشي پر منحصر ھے?
37? جس وقت تم يہ ديکھو کہ ايسے افراد موجود ھيں جنھوں نے مال کي فراواني کے باوجود اپني زندگي ميں ايک مرتبہ بھي زکات نہيں دي ھے?
38? جس وقت تم يہ ديکھو کہ لوگ صبح و شام نشہ ميں چور ھيں?
39? جس وقت تم يہ ديکھو کہ لوگ ايک دوسرے کو ديکھتے ھيں اور بروں کي تقليد کرتے ھيں?
40? جس وقت تم يہ ديکھو کہ ھر سال نيا فساد اور نئي بدعت ايجاد ھوتي ھے?
41? جس وقت تم يہ ديکھو کہ عوام اپنے اجتماعات ميں خود پسند سرمايہ داروں کے پيروکار ھيں?
42? جس وقت تم يہ ديکھو کہ جانوروں کي طرح سب کے سامنے جنسي افعال انجام دے رھے ھيں
43? جس وقت تم يہ ديکھو کہ غير خدا کے سلسلے ميں زيادہ سے زيادہ خرچ کرنے ميں کوئي تکلف نہيں کرتے ليکن خدا کي راہ ميں معمولي رقم بھي صرف نہيں کرتے?
44? جس وقت تم يہ ديکھو کہ ايسے افراد بھي ھيں کہ جس دن گناہ کبيرہ انجام نہ ديں اس دن غمگيں رھتے ھيں?
45? جس وقت تم يہ ديکھو کہ حکومت عورتوں کے ھاتھوں ميں چل گئي ھے?
46? جس وقت تم يہ ديکھو کہ ھوائيں منافقوں کے حق ميں چل رھي ھيں، ايمان داروں کو اس سے کچھ حاصل نہيں ھے?
47? جس وقت تم يہ ديکھو کہ قاضي احکامِ ال?ہي کے خلافِ فيصلہ دے رھا ھے?
48? جس وقت تم يہ ديکھو کہ بندوں کو تقوي? کي دعوت دي جارھي ھے مگر دعوت دينے والا خود اس پر عمل نہيں کر رھا ھے?
49? جس وقت تم يہ ديکھو کہ لوگ اوقات نماز کو اھميت نہيں دے رھے ھيں?
50? جس وقت تم يہ ديکھو کہ ضرورت مندوں کي امداد بھي پارٹي کي بنياد پر کي جارھي ھے، کوئي خدائي عنصر نہيں ھے?
ايسے زمانے ميں اپنے آپ کي حفاظت کرو، خدا سے نجات طلب کرو کہ تمھيں مفاسد سے محفوظ رکھے (انقلاب نزديک ھے)? 13
اس طولاني حديث ميں (جس کو ھم نے بطور اختصار پيش کيا ھے) جو برائياں اور مفاسد بيان کئے گئے ھيں انھيں تين حصوں ميں تقسيم کيا جاسکتا ھے?
1) وہ برائياں اور مفاسد جو دوسروں کے حقوق اور حکومتوں سے متعلق ھيں جيسے باطل کے طرفداروں کي کاميابي، زبان و عمل پر پابندياں، وہ بھي اتني سخت پابندياں کہ صاحبانِ ايمان کسي سے اظھار رائے نہ کرسکيں بربادي کے سلسلے ميں سرمايہ گذاري، رشوت کي گرم بازاري، اعلي? اور حساس منصبوں کي نيلامي، جاھل عوام کي طرف سے صاحبانِ اقتدار کي حمايت?
جنگ کا ميدان گرم رکھنے کے لئے سرمايہ کي افراط، تباہ کن اسلحوں کي دوڑ (آج وہ رقم جو اسلحوں پر صرف ھورھي ھے وہ اس رقم سے کہيں زيادہ ھے جو تعميري اور فلاح و بہبود کے کاموں پر صرف ھوتي ھے)?
برائيوں کے اس ھجوم ميں کسي کو اپني ذمہ داري کا احساس تو در کنار، ايک دوسرے کو يہ نصيحت کي جارھي ھے کہ ايسے ماحول ميں بے طرف رھنا چاھئے?
2) اخلاقي برائياں، جيسے چاپلوسي، تنگ نظري، حسد، ذليل کاموں کے لئے آمادگي? (جيسے مرد اپني زوجہ کي ناجائز کمائي سے زندگي بسر کرے)? شراب و قمار کي عموميت غير اخلاقي تفريحيں، اعمال پر تقريريں اور بے عمل مقررين، ريا کاري، ظاھر داري ھر چيز ميں پارٹي بازي، شخصيت کا معيار دولت کي فراواني…
3) وہ برائياں جن کا تعلق مذھب سے ھے، جيسے خواھشات کو قرآني احکام پر ترجيح دينا، اسلامي احکام کي حسب منشاء تفسير، مذھبي معاملات کو مادي اور دنياوي معياروں پر پرکھنا، مسجدوں ميں گناہگاروں کي اکثريت، مسجدوں کي آرائش، تقوي? اور پرھيز گاري سے بے بہرہ نمازي، نماز کو اھميت نہ دينا?
اگر غور کيا جائے اور منصفانہ نگاہ سے ديکھا جائے تو آج کے سماج ميں يہ ساري برائياں نظر آئيں گي?
يہ تمام برائياں انقلاب کي پہلي اور آخري شرط نہيں ھيں بلکہ ظلم و جور کي فراواني انقلاب کے لئے زمين ھموار کر رھي ھے? يہ برائياں مست اور خوابيدہ انسانوں کو بيدار کرنے کا ايک ذريعہ ھيں? سوئے ھوئے ضمير کے حق ميں تازيانہ ھيں تاکہ لوگ بيدار ھوں اور انقلاب کے لئے آمادہ ھوجائيں?
دنيا والے ايک نہ ايک دن ضرور ان برائيوں کے علل و اسباب تلاش کريں گے اور اس کے نتائج پر غور کريں گے يہ تلاش عمومي سطح پر آگاھي فراھم کرے گي جس کے بعد ھر ايک کو اس بات کا يقين ھوجائے گا کہ اصلاح کے لئے انقلاب ضروري ھے? عالمي اصلاح کے لئے عالمي انقلاب درکار ھے?
يہ بات قابل توجہ ھے کہ اگر دنيا کا کوئي گوشہ ان برائيوں سے پاک صاف ھے، يا بعض افراد ان مفاسد ميں ملوث نہيں ھيں تو اس سے کوئي اثر نہيں پڑتا ھے? کيونکہ جو بات بيان کي گئي ھے وہ عمومي سطح پر اور اکثريت کو پيش نظر رکھتے ھوئے بيان کي گئي ھے?

خاص علامتيں
1) دجّال

جب کبھي دجال کا تذکرہ ھوتا ھے، ذھن پُرانے تصورات کي بنا پر فوراً ايک خاص شخص کي طرف متوجہ ھوجاتا ھے جس کے صرف ايک آنکھ ھے جس کا جسم بھي افسانوي ھے اور سواري بھي? جو حضرت مھدي (عج) کے عالمي انقلاب سے پہلے ظاھو
ھوگا?
ليکن دجال کے لغوي معني 14 اور احاديث سے يہ استفادہ ھوتا ھے کہ دجال کسي خاص فرد سے مخصوص نہيں ھے? بلکہ يہ ايک عنوان ھے جو ھر دھوکہ باز اور حيلہ گر… پر منطبق ھوتا ھے? اور ھر اس شخص پر منطبق ھوتا ھے جو عالمي انقلاب کي راہ ميں رکاوٹيں ايجاد کرتا ھے?
آنحضرت صلي اللہ عليہ وآلہ وسلم کي ايک مشھور حديث ھے:
انہ لہ يکن نبي بعد نوح الا انذر قومہ الدجال واني انذر کموہ? 14
"جناب نوح (ع) کے بعد ھر نبي نے اپني قوم کو دجال کے فتنہ سے ڈرايا ھے ميں بھي تمھيں اس سے ھوشيار کرتا ھوں?"
يہ بات مسلم ھے کہ انبياء عليہم السلام اپني قوم کو کسي ايسے فتنے سے نہيں ڈراتے تھے جو ھزاروں سال بعد آخري زمانہ ميں رونما ھونے والا ھو?
اسي حديث کا يہ آخري جملہ خاص توجہ کا طالب ھے کہ:
فوصفہ لنا رسول اللہ فقال لعلہ سيدرکہ بعض من را?ني او سمع کلامي
رسول خدا (ص) نے ھمارے لئے اس کے صفات بيان فرمائے اور فرمايا کہ ھوسکتا ھے وہ لوگ اس سے دوچار ھوں جنھوں نے مجھے ديکھا ھے يا ميري بات سني ھے?"
اس بات کا قوي احتمال ھے کہ حديث کا يہ آخري جملہ ان فريب کاروں، سرکشوں، حيلہ گروں، مکّاروں … کي نشاندھي کر رھا ھو جو آنحضرت (ص) کے بعد بڑے بڑے عنوان کے ساتھ ظاھر ھوئے? جيسے بني اميہ اور ان کے سرکردہ معاويہ، جہاں "خال المومنين" اور "کاتب وحي" جيسے مقدس عناوين لگے ھوئے ھيں ان لوگوں نے عوام کو صراط مستقيم سے منحرف اور ان کو جاھلي رسومات کي طرف واپس لانے ميں کوئي کسر اُٹھا نہيں رکھي، متقي اور ايمان دار افراد کو کنارے کرديا، اور عوام پر بدکاروں، جاھلوں اور جابروں کو مسلط کرديا?
صحيح ترمذي کي ايک روايت يہ بھي ھے کہ آنحضرت (ص) نے دجال کے بارے ميں ارشاد فرمايا کہ:
"ما من نبي الا وقد انذر قومہ ول?کن ساقول فيہ قولا لم يقلہ نبي لقومہ تعلمون انہ اعور? (وھي مآخذ)
ھر نبي نے اپني قوم کو دجال کے فتنہ سے ڈرايا ھے، ليکن اس کے بارے ميں، ميں ايک ايسي بات کہہ رھا ھوں جو کسي نبي نے اپني قوم سے نہيں کہا، اور وہ يہ کہ وہ کانا ھے?"
بعض حديثوں ميں ملتا ھے کہ حضرت مھدي (عج) کے ظھور سے پہلے تيس دجال رونما ھوں گے?
انجيل ميں بھي دجّال کے بارے ميں ملتا ھے کہ:
تم کو معلوم ھے کہ دجال آنے والا ھے? آج کل بھي کافي دجال ظاھر ھوتے ھيں?" 15
اس عبارت سے صاف ظاھر ھے کہ دجال متعدد ھيں?
ايک دوسري حديث ميں آنحضرت نے ارشاد فرمايا کہ:
لا تقوم الساع? حتي يخرج نحوستين کذا بکلھم يقولون انا نبي?
قيامت اس وقت تک نہيں آئے گي جب تک ساٹھ (60) جھوٹے پيدا نہ ھوجائيں جن ميں سے ھر ايک اپنے پيغمبر بتائے گا?" 16
اس روايت ميں گرچہ دجال کا لفظ نہيں ھے ليکن اتنا ضرور معلوم ھوتا ھے کہ آخري زمانہ ميں جھوٹے دعوے داروں کي تعداد ايک دو پر منحصر نہيں ھوگي?
يہ ايک حقيقت ھے ک جب بھي کسي معاشرے ميں انقلاب کے لئے زمين ھموار ھوتي ھے تو غلط افوا ھيں پھيلانے والوں، فريب کاروں، حيلہ گروں اور جھوٹے دعوے داروں کي تعداد بڑھ جاتي ھے? يہي لوگ ظالم اور فاسد نظام کے محافظ ھوتے ھيں ان کي کوشش يہ ھوتي ھے کہ عوام کے جذبات، احساسات اور ان کے افکار سے غلط فائدہ اٹھايا جائے?
يہ لوگ انقلاب کو بدنام کرنے کے لئے خود بھي بظاھر انقلابي بن جاتے ھيں اور انقلابي نعرے لگانے لگتے ھيں ايسے ھي لوگ انقلاب کي راہ ميں سب سے بڑي رکاوٹ ھيں?
يہ وہ دجال ھيں جن سے ھوشيار رھنے کے بارے ميں ھر نبي نے اپني امت سے نصيحت کي ھے?
حضرت مھدي (عج) کا انقلاب صحيح معنوں ميں عالمي انقلاب ھوگا? اس عالمي انقلاب کے ليے عوام ميں جس قدر آمادگي بڑھتي جائے گي جتنا وہ فکري طور س آمادہ ھوتے جائيں گے ويسے ويس دجّالوں کي سرگرمياں بھي تيز ھوتي جائيں گي ???????? تاکہ انقلاب کي راہ ميں روڑے اٹکا سکيں?
ھوسکتا ھے کہ ان تمام دجالوں کي سربراھي ايک بڑے دجّال کے ھاتھوں ميں ھو، اور اس دجال کي جو صفات بيان کي گئي ھيں وہ علامتي صفات ھوں ???????? علامہ مجلسي (رح) نے بحار الانوار ميں ايک روايت امير المومنين عليہ السلام سے نقل فرمائي ھے جس ميں دجال کي صفات کا ذکر ھے وہ صفات يہ ھيں:
1) اس کے صرف ايک آنکھ ھے، يہ آنکھ پيشاني پر ستارہ? صبح کي طرح چمک رھي ھے? يہ آنکھ اس قدر خون آلود ھے گويا خون ھي سے بني ھے?
2) اس کا خچر (سواري) سفيد اور تيزرو ھے، اس کا ايک قدم ايک ميل کے برابر ھے? وہ بہت تيز رفتاري سے زمين کا سفر طے کرے گا?
3) وہ خدائي کا دعوي? کرے گا? جس وقت اپنے دوستوں کو آواز دے گا تو ساري دنيا ميں اس کي آواز سني جائے گي?
4) وہ درياؤں ميں ڈوب جائے گا? وہ سورج کے ساتھ سفر کرے گا، اس کے سامنے دھنويں کا پہاڑ ھوگا اور اس کي پشت پر سفيد پہاڑ ھوگا? لوگ اسے غذائيں مواد تصور کريں گے?
5) وہ جس وقت ظاھر ھوگا اس وقت لوگ قحط ميں اور غذائي مواد کي قلت ميں مبتلا ھوں گے? 17
يہ بات اپني جگہ صحيح ھے کہ ھميں يہ حق حاصل نہيں ھے کہ ھم قرآن اور احاديث ميں بيان شدہ مطالب کو "علامتي عنوان" قرار ديں کيونکہ يہ کام ايک طرح کي تفسير بالرائے ھے جس کي شدّت سے مخالفت کي گئي ھے? ليکن يہ بھي صحيح نہيں ھے کہ عقلي اور نقلي قرينوں کي موجودگي ميں لفظ کے ظاھري مفھوم سے چپکے رھيں?
آخري زمانے کے بارے ميں جو روايتيں وارد ھوئي ھيں ان ميں "علامتي عنوان" بکثرت موجود ھيں?
مثلا ايک روايت ميں ھے کہ اس وقت مغرب سے آفتاب آئے گا? اگر اس حديث کے ظاھري معني مراد لئے جائيں تو اس کي دو صورتيں ھيں? ايک يہ کہ آفتاب ايکا ايکي مغرب سے طلوع کرے تو اس صورت ميں منظومہ شمسي کي حرکت بالکل معکوس ھوجائے گي جس کے نتيجہ ميں نظام کائنات درھم برھم ھوجائے گا? دوسرے يہ کہ آفتاب رفتہ رفتہ مغرب سے طلوع کرے? تو اس صورت ميں رات دن اس قدت طولاني ھوجائيں گے جس سے نظام زندگي ميں درھمي پيدا ھوجائے گي واضح رھے کہ يہ دونوں ھي معني حديث سے مراد نہيں ھيں? کيونکہ نظام درھم برھم ھونے کا تعلق سے ھے آخري زمانے سے نہيں، جيسا کہ صعصعہ بن صوحان کي روايت کے آخري فقرے سے استفادہ ھوتا ھے کہ يہ حديث ايک علامتي عنوان ھے امام زمانہ کے بارے ميں?
نزال بن سيدہ جو اس حديث کے راوي ھيں، انھوں نے صعصعہ بن صوحان سے دريافت کيا کہ امير المومنين عليہ السلام نے دجال کے بارے ميں بيان کرنے کے بعد يہ کيوں ارشاد فرمايا کہ مجھ سے ان واقعات کے بارے ميں نہ دريافت کرو جو اس کے بعد رونما ھوں گے?"
صعصعہ بن صوحان نے فرمايا:?
جس کے پيچھے جناب عيسي? (ع) نماز ادا کريں گے وہ اھل بيت عليہم السلام کي بارھويں فرد ھوگا اور امام حسين عليہ السلام کي صلب ميں نواں ھوگا? يہ وہ آفتاب ھے جو اپنے کو مغرب سے طلوع کرے گا?
لہ?ذا يہ بات بہت ممکن ھے کہ دجال کي صفات "علامتي عنوان" کي حيثيت رکھتي ھوں جن کا تعلق کسي خاص فرد سے نہ ھو بلکہ ھر وہ شخص دجال ھوسکتا ھے جو ان صفات کا حامل ھو يہ صفات مادي دنيا کے سر براھوں کي طرف بھي اشارہ کر رھي ھيں، کيونکہ:
1) ان لوگوں کي صرف ايک آنکھ ھے، اور وہ ھے مادي و اقتصادي آنکھ ? يہ لوگ دنيا کے تمام مسائل کو صرف اسي نگاہ سے ديکھتے ھيں? مادي مقاصد کے حصول کي خاطر جائز و ناجائز کے فرق کو يکسر بھول جاتے ھيں?
ان کي يہي مادي آنکھ بہت زيادہ چمکدار ھے، کيونکہ ان لوگوں نے صنعتي ميدان ميں چشم گير ترقي کي ھے? زمين کي حدوں سے باھر نکل گئے ھيں?
2) تيز رفتار سوارياں ان کے اختيار ميں ھيں? مختصر سي مدّت ميں ساري دنيا کا چکّر لگا ليتے ھيں?
3) يہ لوگ خدائي کے دعوے دار ھيں? کمزور اور غير ترقي يافتہ ممالک کي قسمت سے کھيلنا اپنا فرض سمجھتے ھيں?
4) جديد ترين آبدوزوں کے ذريعہ سمندر کي تہوں ميں سورج کے ساتھ سفر کرتے ھيں، ان کي نگاھوں کے سامنے ديو پيکر کارخانے، دھويں کا پہاڑ، اور ان کے پيچھے غذائي مواد کا انبار سفيد پہاڑ، (جس کي عوام غذائي اشياء تصور کرتے ھيں، جب کہ وہ صرف پيٹ بھراؤ چيزيں ھيں، ان ميں غذائيت نہيں ھے)?
5) قحط، خشک سالي، استعماريت، جنگ کے لئے سرمايہ گذاري، اسلحہ کے کمرشکن مصارف قتل و غارت گري … ان چيزوں کي بنا پر غذائي اشياء ميں شديد قلت پيدا ھوجاتي ھے جس کي وجہ سے بعض لوگ بھکمري کا شکار ھوجاتے ھيں?
يہ حالات دجال کے منصوبہ بند پروگرام کا نتيجہ ھيں جس سے وہ حسب منشاء استفادہ اٹھاتا ھے? کمزوروں، غريبوں اور زحمت کشوں کي امداد کے بہانے اپنے اقتدار کو استحکام عطا کرتا ھے?
بعض روايتوں ميں ھے ک دجّال کي سواري کے ھر بال سے مخصوص قسم کا ساز سنائي دے گا يہ روايت آج کل کي دنيا پر کس قدر منطبق ھو رھي ھے کہ دنيا کے گوشہ گوشہ ميں موسيقي کا جال بچھا ھوا ھے کوئي گھر سازو آواز سے خالي نہيں ھے?
خواہ دجال ايک مخصوص شخص کا نام ھو، خواہ دجال کي صفات "علامتي عنوان" کي حيثيت رکھتي ھوں، بہر حال عالمي انقلاب کے منتظر افراد، اور حضرت مھدي (عج) کے جانبازوں کي ذمہ داري ھے کہ وہ دجال صفت افراد سے مرعوب نہ ھوں اور ان کے دام فريب ميں گرفتار ھوں? انقلاب کے لئے زمين ھموار کرنے کے لئے ھر ممکن کوشش کرتے رھيں، اور کسي وقت بھي ناکامي اور سستي کے احساس کو اپنے قريب نہ آنے ديں?

2) سفياني کا ظھور

دجال کي طرح سفياني کا بھي تذکرہ شيعہ اور سنّي روايات ميں ملتا ھے? عالمي انقلاب کے نزديک زمانے ميں سفياني کا ظھور ھوگا? 18
بعض روايتوں سے پتہ چلتا ھے کہ سفياني ايک معين شخص کا نام ھے جو ابوسفيان کي نسل سے ھوگا? ليکن بعض دوسري روايتوں سے استفادہ ھوتا ھے کہ سفياني صرف ايک فرد کا نام نہيں ھے بلکہ يہ نام ان تمام افراد کو شامل ھے، جن ميں سفياني صفات پائي جاتي ھيں?
حضرت امام زين العابدين عليہ السلام کي ايک روايت ھے جس سے يہ استفادہ ھوتا ھے کہ سفياني شخص سے زيادہ صفات کا نام ھے? سفياني بھي ايک علامتي عنوان ھے کہ ھر مصلح کے مقابلے ميں کوئي نہ کوئي سفياني ضرور ظاھر ھوگا?
وہ روايت يہ ھے:
امر السفياني حتم من اللہ ولا يکون قائم الا بسفياني 19
"سفياني کا ظھور لازمي اور ضروري ھے? اور ھر قيام کرنے والے کے مقابلے ميں ايک سفياني موجود ھے?"
حضرت امام جعفر صادق عليہ السلام سے ايک روايت نقل ھوئي ھے، جس کے الفاظ يہ ھيں:
انا وا?ل ابي سفيان اھل بيتين تعادينا في اللہ! قلنا صدق اللہ وقالوا کذب اللہ! قاتل ابوسفيان رسول اللہ و قاتل معاوي? علي ابن ابي طالب و قاتل يزيد بن معاوي? الحسين بن علي والسفياني يقاتل القائم 20
"ھم اور آل ابوسفيان دو خاندان ھيں جنھوں نے اللہ کي راہ ميں ايک دوسرے کي مخالفت کي? ھم نے الہي پيغامات کي تصديق کي اور انھوں نے ال?ہي پيغامات کي تکذيب، ابوسفيان نے رسول خدا (ص) سے جنگ کي، معاويہ نے حضرت علي عليہ السلام سے جنگ کي، معاويہ کے بيٹے يزيد نے امام حسين عليہ السلام کو قتل کيا اور سفياني قائم (عج) سے برسر بيکار ھوگا?"
گذشتہ صفحات ميں بيان کيا جاچکا ھے کہ تعميري اقدامات کے مقابلہ ميں دجال صفت افراد کس طرح سرگرم رھيں گے، ذيل کي سطروں ميں سفيانيوں کي سرگرمياں ملاحظہ ھوں? سفيانيوں کي شاہ فرد اور اس ناپاک سلسلے کي ابتداء کا نام ھے ابوسفيان! جس ميں يہ خصوصيات تھيں:?
1) لوٹ مار، ڈاکہ، قتل، غارت گري… کے ذريعہ سرمايہ دار بنا تھا? دوسروں کے حقوق چھين چھين کر مالدار ھوگيا تھا?
2) شيطاني حربوں سے قدرت و طاقت حاصل کي تھي? مکہ اور مضافات کي رياست اسي کے ھاتھوں ميں تھي?
3) جاھلي اور طبقاتي نظام کا مکمل نمونہ تھا? وہ جي جان سے بتوں اور بت پرستي کي حمايت کرتا تھا تفرقہ اندازي اس کا بہترين مشغلہ تھا، اور يہي اس کي حکومت کا راز تھا?
اسلام ان تمام باتوں کا شدت سے مخالف تھا اور ھے? اسلام کے آنے کے بعد اس کي ساري شخصيت پر پاني پڑگيا? اس کي سرمايہ داري، طاقت اور رياست سب ختم ھوگئي? کيونکہ اسلام نے وہ تمام ذرائع يکسر ختم کرديے جن کے ذريعہ ابوسفيان سرمايہ دار، قدرت مند اور سردار قوم بنا تھا? اسي لئے وہ برابر اسلام سے جنگ کرتا رھا مگر ھر مرتبہ ھزيمت اٹھاتا رھا? اس طرح ابوسفيان کے جيتے جي اس کي شخصيت زندہ درگور ھوگئي فتح مکہ کے بعد ابوسفيان نے بادل ناخواستہ اسلام تو قبول کرليا، مگر اسلام دشمني ميں کوئي کمي نہيں آئي، اور اسلام دشمني نسلاً بعد نسل اس کي اولاد ميں منتقل ھوتي رھي? معاويہ کو ورثہ ميں اسلام اور آل محمد (ص) کي دشمني ملي اور معاويہ نے يزيد ميں يہ جراثيم منتقل کرديے?
جس وقت حضرت مھدي (عج) کا ظھور ھوگا اس وقت بھي ابوسفيان کي نسل کا ايک سفياني، يا ابوسفيان کي صفات کا ايک مجسمہ ايک سفياني حضرت کے خلاف صف آراء ھوگا? اس کي بھرپور کوشش يہ ھوگي کہ انقلاب نہ آنے دے يا کم از کم انقلاب کي راہ ميں رکاوٹيں ايجاد کرکے انقلاب کو جلدي نہ آنے دے?
دجّال اور سفياني دونوں کا مقصد ايک ھي ھے، مگر جو فرق ھوسکتا ھے وہ يہ کہ دجال کي سرگرمياں پوشيدہ پوشيدہ ھوں گي جبکہ سفياني کھلے عام مخالف اور جنگ کرے گا?
بعض روايت کے مطابق سفياني زمين کے آباد حصوں پر حکمراني کرے گا? جس طرح ابوسفيان معاويہ، يزيد … نے حکومتيں کي ھيں?
آخري زمانے کا يہ سفياني بھي اس طرح ھزيمت اُٹھائے گا جس طرح اس کے قبل ابوسفيان اور بقيہ سفيانيوں نے اپنے اپنے زمانے کے مصلح سے ھزيمت اٹھائي ھے?
ہاں پر ھم ايک بار پھر يہ بات گوش گزار کريں گے کہ آخري زمانے کے انتظار کرنے والوں اور حضرت مھدي (عج) کے جانباز سپاھيوں کي ذمہ داري يہ ھے کہ ھر طرح کے دجالوں اور سفيانيوں سے ھوشيار رھيں خواہ وہ کسي لباس، کسي صورت اور کسي انداز سے کيوں نہ پيش آئيں کيونکہ سفيانيوں کي ھميشہ يہ کوشش رھي ھے کہ شائستہ افراد، متقي و پرھيزگار اور مصلحين سماجي سرگرميوں سے بالکل کنارہ کش ھوجائيں، تاکہ يہ لوگ بے روک ٹوک اپنے منصوبوں کو عملي بنا سکيں جس کي مثاليں معاويہ کي حکومت ميں بے شمار ھيں?

3) طولاني غيبت

علامات ظھور کے ذيل ميں ابھي يہ تذکرہ کرچکے ھيں کہ ظلم و استبداد کي ھمہ گيري کسي عالمي مصلح کي آمد کي خبر دے رھي ھے? شب کي سياھي سپيدہ? سحري کا مژدہ سنا رھي ھے?
اس صورت ميں ايک سوال ذھن ميں کروٹيں ليتا ھے اور وہ يہ کہ جب ظلم اتنا پھيل چکا ھے تو ظھور ميں تاخير کيوں ھورھي ھے؟ استبداد کي ھمہ گيري کے باوجود غيبت طولاني کيوں ھورھي ھے؟
اس سوال کے جواب کے لئے يہ باتيں قابل غور ھيں?
(1) گزشتہ انبياء اور رسولوں کے انقلاب کي طرح حضرت مھدي (عج) کا انقلاب بھي طبيعي علل و اسباب پر مبني ھوگا? اس انقلاب کي کوئي اعجازي شکل و صورت نہ ھوگي? معجزات تو خاص خاص صورتوں سے مخصوص ھيں? جس طرح پيغمبر اسلام (ص) نے اپني 23 سالہ تبليغي زندگي ميں خاص مواقع کے علاوہ ھر جگہ عام علل و اسباب سے کام ليا ھے?
اسي لئے ھميں ملتا ھے کہ انبياء عليہم السلام اپنے مشن کي تبليغ و توسيع ميں روز مرّہ کے وسائل سے استفادہ کرتے تھے مثلاً افراد کي تربيت، مسائل ميں مشورہ، منصوبہ کي تشکيل، جنگ کے ليے نقشہ کشي خلاصہ يہ کہ ھر مادي اور معنوي وسائل سے استفادہ کرتے اور اسي سے اپنے مشن کو آگے بڑھاتے تھے? وہ ميدان جنگ ميں ھاتھ پر ھاتھ دھرے کسي معجزے کا انتظار نہيں کرتے تھے، بلکہ خدا پر بھروسہ کر کے اپني طاقت سے جنگ لڑتے تھے اور کامياب ھوتے تھے?
اسي طرح حضرت مھدي (عج) اپنے عالمي انقلاب ميں روز مرہ کے وسائل سے استفادہ کريں گے? ال?ہي منصوبوں کو عملي بنائيں گے ان کا کام ال?ہي پيغام کي تبليغ ھي نہيں بلکہ وہ ال?ہي احکام کو ان کي صحيح شکل ميں نافذ کريں گے? وہ دنيا سے ھر طرح کا ظلم و جور کا خاتمہ کرديں گے اتنا بڑا کام صرف يونہي نہيں ھوجائے گا بلکہ اس کے لئے بہت سي چيزيں ضروري ھيں?
(2) گذشتہ بيان سے يہ بنيادي بات واضح ھوگئي کہ انقلاب سے پہلے بعض چيزوں کا وجود ضروري ھے? عوام ميں کئي اعتبار سے آمادگي درکار ھے?

ايک: قبوليت

دنيا کي نا انصافيوں کي تلخيوں کو دنيا والے باقاعدہ احساس کريں? انسان کے خود ساختہ قوانين کے نقائص اور اس کي کمزوريوں کو بھي سمجھيں?
لوگوں کو اس حقيقت کا باقاعدہ احساس ھوجائے کہ مادي قوانين کے سايہ ميں حياتِ انساني کو سعادت نصيب نہيں ھوسکتي ھے? انسان کے خود ساختہ قوانين کے لئے کوئي "نفاذي ضمانت" نہيں ھے بلکہ انسان کے خود ساختہ قوانين مشکلات ميں اضافہ کرتے ھيں کمي نہيں? يہ احساس بھي ھونا چاھئے کہ موجودہ افراتفري کا سبب خود ساختہ نظام ھائے حيات ھيں?
لوگوں کو اس بات کا بھي احساس ھونا چاھئے کہ يہ دنيا اسي وقت سدھر سکتي ھے جب ميں ايسا نظام نافذ ھوگا جس کي بنياد معنويت، انساني اور اخلاقي اقدار پر ھو، جہاں معنويت اور ماديت دونوں کو جائز حقوق ديے گئے ھوں? جس ميں انساني زندگي کے تمام پہلوؤں کو بہ حد اعتدال سيراب کيا گيا ھو?
اسي کے ساتھ ساتھ يہ بھي باور ھوجائے کہ صنعت اور ٹکنالوجي کے ميدانوں ميں چشم گير اور حيرت انگيز ترقياں انسان کو سعادت عطا نہيں کرسکتي ھيں? البتہ شقادت ضرور تقسيم کرسکتي ھيں? ھاں اس صورت ميں ضرور مفيد ثابت ھوسکتي ھيں جب يہ ترقياں معنوي، انساني اور اخلاقي اصولوں کے زير سايہ حاصل کي جائيں?
مختصر يہ کہ جب خوب تشنہ نہيں ھوں گے اس وقت تک چشمہ کي تلاش ميں تگ و دو نہيں کريں گے?
يہ تشنگي کچھ تو رفتہ رفتہ وقت گذرنے سے حاصل ھوگي اور کچھ کے ليے تعليم و تربيت درکار ھوگي، يہ دنيا کے مفکرين کا کام ھے کہ ھر ايک ميں يہ احساس بيدار کرديں کہ انسان کے خود ساختہ قوانين دنيا کي اصلاح نہيں کرسکتے ھيں بلکہ اس کے لئے ايک عالمي انقلاب درکار ھے? بہر حال اس ميں وقت لگے گا?

دو? ثقافتي اور صنعتي ارتقاء

ساري دنيا کے لوگ ايک پرچم تلے جمع ھوجائيں، حقيقي تعليم و تربيت کو انتا زيادہ عام کيا جائے کہ فرد فرد اس بات کا قائل ھوجائے کہ زبان، نسل، علاقائيت… ھرگز اس بات کا سبب نہيں بن سکتے کہ تمام دنيا کے باشندے ايک گھر کے افراد کي طرح زندگي بسر نہ کرسکيں?
دنيا کي اقتصادي مشکلات اسي وقت حل ھوسکتي ھيں جب ثقافت اور افکار ميں ارتقاء اور وسعت پيدا ھو? اسي کے ساتھ صنعت بھي اتنا ترقي يافتہ ھوکہ دنيا کا کوئي گوشہ اس کي دسترس سے دور نہ ھو?
بعض روايتوں سے استفادہ ھوتا ھے کہ حضرت مھدي (عج) کے ظھور کے بعد صنعت خاص طور پر ٹرانسپورٹ اتني زيادہ ترقي يافتہ ھوجائے گي کہ يہ وسيع و عريض دنيا نزديک شھروں کے مانند ھوجائے گي? مشرق و مغرب ميں بسنے والے اس طرح زندگي بسر کريں گے جس طرح ايک گھر کے افراد زندگي بسر کرتے ھيں?
ظھور کے بعد ھوسکتا ھے کہ ترقياں انقلابي صورت ميں رونما ھوں مگر اتنا ضرور ھے کہ ظھور کے لئے علمي طور پر آمادگي ضروري ھے?

تين: انقلابي گروہ

ايسے افراد کي موجودگي ضروري ھے جو انقلاب ميں بنيادي کردار ادا کرسکيں، ايسے افراد کي تعداد کم ھي کيوں نہ ھو، مگر عملي اعتبار سے ھر ايک بھرپور انقلابي ھو اور انقلابي اصولوں پر جي جان سے عامل ھو، غير معمولي شجاع، دلسوز، فداکار، جانباز اور جاں نثار ھو?
اس دھکتي ھوئي دنيا اور خزاں رسيدہ کائنات ميں ايسے پھول کھليں جو گلستاں کا مقدمہ بن سکيں جو بہار کا پيش خيمہ ھوسکيں? انسانوں کے ڈھير سے ايسے عالي صفت افراد نکليں جو آئندہ انقلاب کي مکمل تصوير ھوں?
ايسے افراد کي تربيت خود معصوم رھبر کے سپرد ھے جو بالواسطہ يا بلاواسطہ ايسے افراد کي تربيت کا انتظام کريں? چونکہ ھر کام معجزے سے نہيں ھوگا، لھ?ذا يہاں بھي وقت درکار ھے?
بعض روايتوں ميں حضرت مھدي (عج) کي غيبت کے طولاني ھونے کا سبب يہ بيان کيا گيا ھے کہ خالص ترين افراد سامنے آجائيں، جو ھر طرح کے امتحانوں ميں کامياب ھوچکے ھوں?
اس بات کي وضاحت کي ضرورت ھے کہ ال?ہي امتحان اور آزمائش کا مطلب ممتحن کے علم ميں اضافہ کرنا نہيں ھے بلکہ امتحان دينے والوں کي پوشيدہ صلاحيتوں کا اظھار ھے يعني وہ استعداد جو قوت کي منزل ميں ھے اسے فعليت عطا کرنا ھے?
گذشتہ بيان سے يہ بات کسي حد تک ضرور واضح ھوگئي ک حضرت مھدي (عج) کے ظھور ميں تاخير کيوں ھورھي ھے تاخير کا سبب ھمارے نواقص اور کمزورياں ھيں، ورنہ اس طرف سے کوئي تاخير نہيں ھے? جس وقت ھم اپنے نواقص کو ختم اور کمزوريوں کو دور کرليں گے اس وقت ظھور ھوجائے گا? جس قدر جلد ھم اس مقصد ميں کامياب ھوجائيں گے اتنا ھي جلد ظھور ھوگا?

زمانہ? غيبت ميں وجودِ امام کا فائدہ

حضرت مھدي عجل اللہ فرجہ کي غيبت کا جب تذکرہ ھوتا ھے تو يہ سوال ذھنوں ميں کروٹيں لينے لگتا ھے کہ امام يا رھبر کا وجود اسي صورت ميں مفيد اور قابل استفادہ ھے جب وہ نگاھوں کے سامنے ھو اور اس سے رابطہ برقرار ھوسکتا ھے ليکن اگر امام نظروں سے غائب ھو، اس تک پہونچنا ممکن نہ ھو، ايسي صورت ميں وجود امام سے کيا حاصل …؟
بعض کے لئے ھوسکتا ھے کہ يہ سوال نيا معلوم ھو اور کسي "دانشمند" ذھن کي اُپج معلوم ھو مگر خوش قسمتي يا بد قسمتي سے يہ سوال بہت پرانا ھے? يہ سوال حضرت مھدي (عج) کي ولادت سے پہلے کيا جاچکا ھے کيونکہ جب حضرت مھدي (عج) اور ان کي غيبت کے بارے ميں رسول خدا (ص) يا ائمہ عليہم السلام بيان فرماتے تھے اس وقت بعض لوگ يہي سوال کرتے تھے?
احاديث ميں اس سوال کا جواب متعدد انداز سے ديا گيا ھے? اس سلسلے ميں رسول اللہ صلي اللہ عليہ وآلہ وسلم کي ايک حديث قابلِ غور ھے? آنحضرت (ص) نے زمانہ غيبت ميں حضرت مھدي (عج) کے وجود کا فائدہ بيان کرتے ھوئے ارشاد فرمايا:
اي والذي بعثني بالنبوة انھم ينتفعون بنور ولايتہ في غيبتہ کانتفاع الناس بالشمس وان جللھا السحاب"
قسم ھے اس ذات اقدس کي جس نے مجھے نبوت پر مبعوث فرمايا، لوگ ان کے نورِ ولايت سے اس طرح فائدہ اٹھائيں گے جس طرح لوگ سورج سے اس وقت استفادہ کرتے ھيں جب وہ بادلوں کي اوٹ ميں ھوتا ھے?"
اس حديث کو بہتر طريقے سے سمجھنے کے لئے يہ ضروري ھے کہ ھم پہلے يہ سمجھيں کہ نظام کائنات ميں آفتاب کيا کردار ادا کرتا ھے?
آفتاب دو طرح اپنا نور پھيلاتا ھے ايک بلا واسطہ اور دوسرے بالواسطہ? دوسرے لفظوں ميں ايک واضح اور دوسرے پوشيدہ?
جس وقت آفتاب بلا واسطہ اور واضح نور پھيلاتا ھے، اس وقت اس کي شعاعيں دکھائي ديتي ھيں? يہ درست ھے کہ زمين کے گرد ھوا کي دبيز چادر شعاعوں کي حرارت ميں کمي کر ديتي ھے اور ان کے زھريلے اثرات کو ختم کرتي ھے? ليکن ھوا کي يہ دبيز چادر آفتاب کو بلا واسطہ نور پھيلانے سے نہيں روکتي?
ليکن بالواسطہ اور بطور مخفي نور افشاني کي صورت ميں بادل آفتاب کے چہرے کو چھپا ليتا ھے اس صورت ميں روشني تو ضرور نظر آتي ھے مگر آفتاب دکھائي نہيں ديتا?
اس کے علاوہ آفتاب کا نور اور اس کي شعاعيں نظام کائنات ميں اھم کردار ادا کرتي ھيں يہ نور اور شعاعيں،
زندہ چيزوں کا رشد و نمو،
غذا اور بقائے نسل،
حس و حرکت،
خشک زمينوں کي آبياري،
دريا کي موجوں کا جوش و خروش،
نسيم سحر کي اٹکھيلياں،
پژمردگي کو حيات نو عطا کرنے والي بارش،
آبشاروں کے نغمے،
مرغانِ چمن کي خوش الحانياں،
پھولوں کي نزاکت اور طراوٹ،
انسان کي رگوں ميں خون کي گردش اور دل کي دھڑکن،
ذھنِ بشر ميں فکر کي جولانياں،
طفلِ شير خوار کي طرح کيوں کي مسکراھٹ?
يہ ساري کرشمہ سازي آفتاب کے نور اور اس کي شعاعوں کي بدولت ھے? اگر لمحہ بھر بھي زمين کا رشتہ آفتاب سے منقطع ھوجائے تو پھر نور پر ظلمتوں کا راج ھوجائے اور نظام کائنات درھم برھم ھوجائے?
ہاں ايک سوال کيا جاسکتا ھے? يہ ساري باتيں صرف اس صورت ميں ھيں جب آفتاب بلا واسطہ نور پھيلا رھا ھو?؟
ھر شخص نفي ميں جواب دے گا? جب آفتاب کا نور بالواسطہ زمين تک پہونچ رھا ھو اس وقت بھي آثار حيات باقي رھتے ھيں? بالواسطہ نور افشاني کي صورت ميں صرف وھي آثار ختم ھوتے ھيں جن کا تعلق بلا واسطہ نور افشاني سے ھوتا ھے، بالواسطہ نور افشاني ميں وہ جراثيم ضرور پھيل جاتے ھيں جن کے حق ميں بلا واسطہ نور افشاني زھر ھلاھل ھے?
اب تک بادلوں کي اوٹ ميں آفتاب کے اثرات کا تذکرہ تھا? اب ذرا يہ ديکھيں، کہ غيبت کے زمانے ميں ديني رھبروں کے فوائد کيا ھيں اور اس کے اثرات کيا ھيں?
غيبت کے زمانے ميں وجود امام کي نامرئي شعاعيں مختلف اثرات رکھتي ھيں?

1) اُمّيد

ميدان جنگ ميں جاں نثار بہادر سپاھيوں کي کوشش يہ ھوتي ھے کہ کسي بھي صورت پرچم سرنگوں نہ ھونے پائے جبکہ دشمن کي پوري طاقت پرچم سرنگوں کرنے پر لگي رھتي ھے کيونکہ جب تک پرچم لہراتا رھتا ھے، سپاھيوں کي رگوں ميں خون تازہ دوڑتا رھتا ھے?
اسي طرح مرکز ميں سردار لشکر کا وجود سردار خاموش ھي کيوں نہ ھو سپاھيوں کو نيا عزم اور حوصلہ عطا کرتا رھتا ھے?
اگر لشکر ميں يہ خبر پھيل جائے کہ سردار قتل ھوگيا تو اچھا خاصا منظم لشکر متفرق ھوجاتا ھے سپاھيوں کے حوصلے منجمد ھوجاتے ھيں?
قوم شيعہ جس کا يہ عقيدہ ھے کہ اس کے امام زندہ ھيں، اگر چہ بظاھر امام نظر نہيں آتے ھيں، اس کے باوجود يہ قوم خود کو کبھي تنہا محسوس نہيں کرتي? اسے اس بات کا يقين کہ اس کا رھبر موجود ھے جو ان کے امور سے واقف ھے ھر روز رھبر کي آمد کا انتظار رھتا ھے يہ انتظار قوم ميں تعميري جذبات کو بيدار رکھتا ھے? ماھرين نفسيات اس حقيقت سے خوب واقف ھيں کہ انسان کے حق ميں جس قدر "مايوسي" زھر ھلاھل ھے اسي قدر "اميد" ترياق، ھے?
اگر رھبر کا کوئي خارجي وجود نہ ھو بلکہ لوگ اس کے تولد کا انتظار کر رھے ھوں تو صورت حال کافي مختلف ھوجائے گي?
اگر ايک بات کا اور اضافہ کرديا جائے تو بات کافي اھم ھوجائے گي اور وہ يہ کہ شيعہ روايات ميں کافي مقدار ميں اس بات کا تذکرہ ملتا ھے کہ غيبت کے زمانے ميں امام عليہ السلام اپنے ماننے والوں کي باقاعدہ حفاظت کرتے ھيں? ھر ھفتہ اُمّت کے سارے اعمال امام عليہ السلام کي خدمت ميں پيش کرديے جاتے ھيں? 21
يہ عقيدہ ماننے والوں کو اس بات پر آمادہ کرتا ھے کہ وہ ھميشہ اپنے اعمال کا خيال رکھيں کہ ان کا ھر عمل امام عليہ السلام کي نظر مبارک سے گزرے گا? لھ?ذا اعمال ايسے ھوں جو امام عليہ السلام کي بارگاہ اقدس کے لائق ھوں جن سے امام خوش ھوں? يہ طرز فکر کس قدر تعميري ھے اس سے کوئي بھي انکار نہيں کرسکتا?

2) دين کي حفاظت

حضرت علي عليہ السلام نے ايک مختصر سے جملے ميں امام کي ضرورت کو بيان فرمايا ھے اور اس حقيقت کي طرف اشارہ کيا ھے کہ زمين کسي بھي صورت ميں ال?ہي نمائندے سے خالي نہيں رہ سکتي ھے? ارشاد فرماتے ھيں:
اللھمّ بلي? لاتخلوا الارض من قائم للہ بحجّ? اما ظاھراً مشھورا او خائفا مغمورا لئلا تبطل حجج اللہ وبيناتہ
ھاں واللہ زمين کبھي بھي ال?ہي دليل، قائم اور حجت خدا سے خالي نہيں رہ سکتي خواہ يہ حجت ظاھر و آشکارا ھو اور خواہ پوشيدہ و مخفي? تاکہ اللہ کي دليليں اور اس کي نشانيان ضائع نہ ھونے پائيں?
ھر روز ھي شخصي نظريات کو مذھب کا رنگ ديا جارھا ھے خود غرض اور فتنہ پرداز افراد آسماني تعليمات کي حسب خواھش توضيح و تفسير کر رھے ھيں جس کي بنا پر اصلي اسلام ميں اتني خرافات شامل ھوگئي ھيں کہ ايک عام انسان کے لئے صحيح اسلام کي تلاش محال نہيں تو دشوار ضروري ھے?
وحي کے ذريعہ آسمان سے نازل شدہ آب حيات ميں اجنبي نظريات کي آميزش سے وہ تازگي اور باليدگي نہ رھي جو صدر اسلام ميں تھي? ايسي صورت ميں ايک ايسے فرد کي موجودگي سخت ضروري ھے جس کے پاس آسماني اسناد اپني اصلي صورت ميں ھوں? اب کسي پر وحي تو نازل ھوگي نہيں? کيونکہ آنحضرت (ص) کي وفات کے بعد وحي کا سلسلہ منقطع ھوگيا لھ?ذا اس زمانے ميں بھي ايک معصوم فرد کا وجود لازمي ھے جو اسلامي تعليمات کا تحفظ کرسکے، جس کے پاس ھر طرح کي خرافات سے پاک صاف دين موجود ھو? اسي حقيقت کي طرف مولائے کائنات نے اشارہ فرمايا ھے کہ "تاکہ اللہ کي دليليں اور نشانياں ضائع نہ ھونے پائيں?" اور اس طرح حقيقت کے متلاشي افراد حقيقت تک پہونچ سکيں اور ھدايت کے پياسے سرچشمہ? ھدايت و حيات سے سيراب ھوسکيں?

3) فداکاروں کي تربيت

بعض افراد کا خيال ھے کہ غيبت کے زمانے ميں امام (ع) کا کوئي تعلق عوام سے نہيں ھے جبکہ حقيقت اس کے بالکل بر خلاف ھے? اسلامي روايات ميں اس حقيقت کي طرف اشارہ ملتا ھے کہ غيبت کے زمانے ميں بھي امام عليہ السلام سے ايک ايسے خاص گروہ کا رابطہ ضرور برقرار رھے گا جس کا ھر فرد عشق ال?ہي سے سرشار، اخلاص کا پيکر، اعمال و اخلاق کي منھ بولتي تصوير اور دلوں ميں عالم کي اصلاح کي تمنا ليے ھوئے ھے اسي طريقے سے ان لوگوں کي رفتہ رفتہ تربيت ھورھي ھے، انقلابي امنگيں ان کي روح ميں جذب ھوتي جارھي ھيں?
يہ لوگ اپنے علم و عمل اور تقوي? و پرھيزگاري سے اتني بلندي پر ھيں جہاں ان کے
اور آفتابِ ھدايت کے درميان کوئي حجاب نہيں ھے حقيقت بھي يہي ھے اگر آفتاب بادلوں کي اوٹ ميں چلا جائے تو اس کي زيارت کے لئے آفتاب کو نيچے کھينچا جاسکتا بلکہ خود بادلوں کو چير کر اوپر نکلنا ھوگا تب آفتاب کا رخ ديکھ سکيں گے? گذشتہ صفحات ميں ھم يہ حديث نقل کرچکے ھيں کہ پيغمبر اسلام (ص) نے غيبت کي مثال بادلوں ميں چھپے ھوئے آفتاب سے دي ھے?

4) نامرئي تاثير

ھم سب جانتے ھيں کہ سورج کي شعاعيں دو طرح کي ھيں، ايک وہ شعاعيں جو دکھائي ديتي ھيں اور دوسرے وہ جو دکھائي نہيں ديتي ھيں? اسي طرح آسماني رھبر اور ال?ہي نمائندے دو طرح عوام کي تربيت کرتے ھيں ايک اپنے قول اور عمل کے ذريعے اور دوسرے اپنے روحاني اثرات کے ذريعے? اصطلاحي طور پر پہلے طريقے کو "تربيت تشعريعي" اور دوسرے طرز کو "تربيت تکويني" کہا جاسکتا ھے? دوسري صورت ميں الفاظ و حروف نہيں ھوتے بلکہ جاذبيت اور کشش ھوتي ھے? ايک نگاہ اثر انداز سے روح و جسم ميں انقلاب برپا ھوجاتا ھے? اس طرح کي تربيت کي بے شمار مثاليں اسلامي تاريخ کے صفحات پر جابجا نظر آتي ھيں? شاھد کے طور پر جناب زھرقين، جناب حر، جناب ابو بصير کے پڑوسي (حکومت بني اميہ کا سابق کارندہ)، قيدخانہ بغداد ميں ھارون کي فرستادہ مغنيّہ …

5) مقصد تخليق

کوئي بھي عقلمند بے مقصد قدم نہيں اٹھاتا ھے? ھر وہ سفر جو علم و عقل کي روشني ميں طے کيا جائے اس کا ايک مقصد ضرور ھوگا? فرق صرف يہ ھے کہ جب انسان کوئي با مقصد کام انجام ديتا ھے تو اس کا مقصد اپني ضروريات پورا کرنا ھوتا ھے ليکن جب خدا کوئي کام انجام ديتا ھے تو اس ميں بندوں کا فائدہ پوشيدہ ھوتا ھے کيونکر خدا ھر چيز سے بے نياز ھے?
اب ذرا اس مثال پر توجہ فرمائيے:
ايک زرخيز زمين ميں ايک باغ لگايا جاتا ھے جس ميں طرح طرح کے پھل دار درخت اور رنگ برنگ کے خوشنما اور خوشبودار پھول ھيں، ان درختوں کے درميان کچھ بيکار قسم کي گھاس بھي اُگي ھوئي ھے? ليکن اس باغ کي آبياري کي جائے گي تو گھاس کو بھي فائدہ پہونچے گا?
ہاں دو مقصد سامنے آتے ھيں:
اصلي مقصد: پھل دار درختوں کي اور پھولوں کي آبياري،
ثانوي مقصد: گھاس کي آبياري،
بغير کسي شک و ترديد کے يہ بات کہي جاسکتي ھے کہ آبياري کا سبب اصلي مقصد ھے ثانوي مقصد نہيں?
اگر اس باغ ميں صرف ايک پھل دار درخت باقي رہ جائے جس سے تمام مقاصد پورے ھورھے ھوں، تب بھي آبياري ھوتي رھے گي اور اس بنا پر کوئي عقل مند آبياري سے دستبردار نہيں ھوگا کہ ايک درخت کي خاطر کتني بيکار چيزيں سيراب ھورھي ھيں? البتہ اگر باغ ميں ايک درخت بھي نہ رہ جائے تو اس صورت ميں آبياري ايک بے مقصد کام ھوگا?
يہ وسيع و عريض کائنات بھي ايک سر سبز و شاداب باغ کي مانند ھے? انسان اس باغ کے درخت ھيں? وہ لوگ جو راہ راست پر گامزن ھيں اور روحاني و اخلاقي ارتقاء کي منزليں طے کر رھے ھيں، وہ اس باغ کے پھل دار درخت ھيں اور خوشبو دار پھول ھيں? ليکن وہ افراد جو راہ راست سے منحرف ھوگئے اور جنھوں نے گناہ کي راہ اختيار کي، ارتقاء کے بجائے پستيوں ميں گرتے چلے گئے، يہ لوگ اس باغ کي گھاس وغيرہ کہے جاسکتے ھيں?
يہ چمکتا ھوا آفتاب، يہ نسيم جانفزا، يہ آسمان و زمين کي پے پناہ برکتيں، گناھگاروں اور ايک دوسرے سے دست و گريباں افراد کے ليے پيدا نہيں کي گئي ھيں، بلکہ يہ ساري کائنات اور اس کي تمام نعمتيں خدا کے نيکو کار بندوں کے لئے پيدا کي گئي ھيں اور وہ دن ضرور آئے گا جب يہ کائنات ظالموں کے ھاتھ سے نکل کر صالحين کے اختيار ميں ھوگي?
ان الارض يرثھا عبادي الصالحون
قيناً ميرے صالح بندے اس زمين کے وارث ھوں گے?"
يہ صحيح ھے کہ دنيا ميں ھر طرف گناھگاروں اور خدا ناشناس افراد کي اکثريت ھے ليکن کائنات کا حسنِ نظام بتا رھا ھے کہ کوئي ايسي فرد ضرور موجود ھے جس کي خاطر يہ دنيا سجي ھوئي ھے? حديث ميں اس بات کي طرف ان الفاظ ميں اشارہ کيا گيا ھے:
بيمنہ رزق الوري? و بوجودہ ثبتت الارض والسماء
ان کي (حجت خدا کي) برکت سے لوگوں کو رزق ملتا ھے اور ان کے وجود کي بنا پر زمين و آسمان قائم ھيں?"
اسي بات کو خداوند عالم نے حديث قدسي ميں پيغمبر اسلام (ص) کو مخاطب کرکے بيان فرمايا ھے:
لولاک لما خلقت الافلاک
اگر آپ نہ ھوتے تو ميں آسمانوں کو نہ پيدا کرتا?"
زمانہ? غيبت ميں وجود امام عليہ السلام کا ايک فائدہ اس کائنات ھستي کي بقاء بھي ھے?
وہ لوگ جو حقائق سے بہت دور ھيں وہ زمانہ? غيبت ميں وجود امام (ع) کے لئے صرف شخصي فائدے کے قائل ھيں اور اس عقيدے کے سلسلے ميں شيعوں پر طرح طرح کے اعتراضات کيا کرتے ھيں جبکہ وہ اس بات سے بالکل غافل ھيں کہ خود ان کا وجود امام عليہ السلام کے وجود کي بنا پر ھے? يہ کائنات اس لئے قائم ھے کہ امامِ قائم (عج) پردہ? غيبت ميں موجود ھيں اگر امام نہ ھوتے تو نہ يہ دنيا ھوتي اور نہ اس دنيا کے بسنے والے

فتح کا انداز

جب حضرت مھدي سلام اللہ عليہ ظھور فرمائيں گے تو حضرت کي فتح کا انداز کيا ھوگا؟ اور کس طرح سے حضرت ساري دنيا کو عدل و انصاف سے بھر ديں گے?؟ کيا حضرت تلوار کے ذريعہ جنگ کريں گے اور جديد اسلحوں پر کاميابي حاصل کريں گے?؟
ان باتوں کے دو جواب ديے جاسکتے ھيں، ايک عقل کي روشني ميں اور دوسرا حديث کي روشني ميں?

عقل

يہ ايک حقيقت ھے کہ گذرے زمانے کي طرف باز گشت ناممکن اور غير منطقي ھے ظھور کے بعد ھرگز يہ نہ ھوگا کہ "عصر نور" "عصر ظلمت" کي طرف پلٹ جائے?
جديد صنعت اور ترقي يافتہ ٹکنا لوجي نے جہاں انسان کي بہت سي مشکلات کو حل کيا ھے وھاں يہ چيزيں عادلانہ حکومت کے قيام کے بارے ميں بھي معاون ثابت ھوں گي? کيونہ ساري کائنات پر حکمراني، اور گوشہ گوشہ ميں عدل و انصاف کا قيام بغير ترقي يافتہ ٹکنا لوجي کے ناممکن ھے بلکہ حضرت کے طرز حکومت کو پيش نظر رکھتے ھوئے موجودہ طرقي يافتہ صنعت و ٹکنالوجي اس دور ميں ناکافي ھوگي?
جنگ کے ميدان ميں بھي ايسے اسلحوں کا استعمال ھوگا جن کا تصور اس دور ميں
ھمارے لئے آسان نہيں ھے? طرز جنگ کے سلسلے ميں عقل کي بنياد پر کوئي يقيني بات نہيں کہي جاسکتي? يہ اسلحے مادي ھوں گے يا نفسياتي … البتہ اتنا ضرور معلوم ھے کہ وہ اسلحہ ايسے ھوں گے? جو نيکو کار اور گناھگار ميں فرق کو ضرور قائم رکھيں گے?

حديث

احاديث ميں ايسي پر معني تعبيريں ملتي ھيں جن سے گزشتہ باتوں کے جواب واضح ھوجاتے ھيں? ذيل کي سطروں ميں صرف چند حديثيں قارئين کي نظر کر رھے ھيں?
1) حضرت امام جعفر صادق عليہ السلام نے ارشاد فرمايا کہ:
ان قائمنا اذا قام اشرقت الارض بنور ربھا واستغني العباد من ضوء الشمس 22
"جس وقت ھمارے قائم قيام فرمائيں گے اس وقت زمين اپنے پروردگار کے نور سے روشن ھوجائے گي اور بندگان خدا سورج کي روشني سے بے نياز ھوجائيں گے?"
اس سے يہ بات سمجھ ميں آتي ھے کہ اس وقت روشني اور انرجي کا مسئلہ اس قدر آسان ھوجائے گا کہ دن و رات سورج کے بجائے ايک دوسرے نور سے استفادہ کيا جاسکے گا? ھوسکتا ھے کہ بعض لوگ اس چيز کو معجزے کي شکل ديں? ليکن در حقيقت يہ اعجاز نہ ھوگا بلکہ يہ ٹکنا لوجي اور صنعت کے ترقي يافتہ دور کي طرف اشارہ کيا گيا ھے?
اتنے زيادہ ترقي يافتہ دور کے مقابلے ميں آج کے جديد ترين اسلحوں کي کيا حقيقت ھوگي?
2) حضرت امام جعفر صادق عليہ السلام نے جناب ابو بصير سے ارشاد فرمايا کہ:
انہ اذا تناھت الامور الي صاحب ھذا الامر رفع اللہ تبارک وتعالي? لہ کل منخفض من الارض خفض لہ کل مرتفع حتي تکون الدنيا عندہ بمنزل? راحتہ فايکم لو کانت في راحتہ شعرة لم يبصرھا? 23
"جس وقت سلسلہ امور صاحب الامر تک پہونچے گا اس وقت خداوند عالم زمين کي ھر پستي کو ان کے لئے بند کردے گا اور ھر بلندي کو ان کے لئے پست کردے گا? يہاں تک کہ ساري دنيا ان کے نزديک ھاتھ کي ہتھيلي کے مانند ھوجائے گي? تم ميں سے کون ھے جس کي ہتھيلي ميں بال ھو، اور وہ اس کو نہ ديکھ رھا ھو?"!؟
آج کي ترقي يافتہ دنيا ميں بلنديوں پر جديد ترين آلات نصب کرکے دنيا کے مختلف گوشوں ميں آوازيں اور تصويريں بھيجي جارھي ھيں اور اس سلسلے ميں مصنوعي سياروں سے بھي استفادہ کيا جارھا ھے? ليکن اس کي دوسري صورت آج کي دنيا ميں ابھي تک عملي نہيں ھوسکي ھے يعني مختلف جگہوں سے ايک مرکز پر خبروں اور تصويروں کا انعکاس? مگر يہ کہ دنيا کے گوشے گوشے ميں نشر کرنے والے اسٹيشن قائم کيے جائيں?
اس حديث سے ھميں يہ پتہ چلتا ھے کہ ظھور کے بعد يہ مشکل بھي آسان ھوجائے گي اس وقت دنيا ہاتھ کي ہتھيلي کي مانند ھوجائے گي? دنيا کے دور ترين مقامات پر رونما ھونے والے واقعات پر حضرت کي بھرپور نظر ھوگي? اس وقت نزديک و دور کا امتياز ختم ھوجائے گا? دور و نزديک ھر ايک پر حضرت کي يکساں نگاہ ھوگي? ظاھر ھے جي عادلانہ عالمي حکومت کے ليے وسيع ترين اطلاعات کي سخت ضرورت ھے? جب تک دنيا کے ھر واقعہ پر بھرپور نظر نہ ھوگي اس وقت تک عدل کا قيام اور ظلم کي فنا کيونکر ممکن ھوگي?
3) حضرت امام محمد باقر عليہ السلام نے ارشاد فرمايا کہ:
ذخر لصاحبکم الصعب!
قلت: وما الصعب؟
قال: ما کان من سحاب فيہ رعد و صاعق? او برق فصاحبکم يرکبہ اما انہ سيرکب السحاب وبرقي في الاسباب، اسباب السم?و?ات والارضين! 24
تمھارے امام کے لئے سرکش وسيلہ کو ذخيرہ کيا گيا ھے?
راوي کا بيان ھے کہ ميں نے دريافت کيا کہ مولا وہ سرکش وسيلہ کيا ھے؟ فرمايا: وہ بادل ھے جس ميں گرج چمک يا بجلي پوشيدہ ھے وہ اس بادل پر سوار ھوگا? آگاہ ھوجاؤ کہ عنقريب بادلوں پر سوار ھوگا، بلنديوں پر پرواز کرے گا، ساتوں آسمانوں اور زمينوں کا سفر کرے گا?"
بادل سے يہ عام بادل مراد نہيں ھے? يہ تو بخارات کا مجموعہ ھيں? يہ اس لائق نہيں ھيں کہ ان کے ذريعہ سفر کيا جاسکے، زمين سے بادلوں کا فاصلہ کوئي زيادہ نہيں ھے بلکہ بادل سے ايک ايسے وسيلہ سفر کي طرف اشارہ ھے جس کي رفتار بے پناہ ھے? جس کي آواز گرج، چمک اور بجلي جيسي ھے وہ سفر کے دوران آسمانوں کو چيرتا ھوا نکل جائے گا?
آج کي دنيا ميں ھمارے سامنے کوئي ايسا وسيلہ اور ذريعہ? سفر نہيں ھے جسے مثال کے طور پر پيش کيا جاسکے? البتہ صرف "اڑن طشتري" کے ذريعہ اس وسيلہ سفر کا ايک ھلکا سا تصور ذھنوں ميں ضرور آسکتا ھے?
ان حديثوں سے يہ حقيقت بالکل واضح ھوجاتي ھے کہ حضرت مھدي سلام اللہ عليہ کے ظھور کے بعد صنعت، ٹکنالوجي کس بام عروج پر ھوں گي? ان حديثوں سے يہ بات واضح ھوگئي کہ ظھور کے بعد ترقي ھوگي تنزلي نہيں? حضرت جديد ٹکنالوجي کے ذريعہ دنيا ميں عدل و انصاف کي حکومت قائم کريں گے? ليکن ايک بات جو ذھنوں ميں بار بار کھٹکتي ھے وہ يہ ھے کہ کيا حضرت تلوار کے ذريعہ جنگ کريں گے?؟
اس بات کا جواب يہ ھے کہ روايات ميں "سيف" کا لفظ استعمال کيا گيا ھے?
سيف" يا شمشير يہ الفاظ جب استعمال کيے جاتے ھيں تو ان سے قدرت و طاقت مراد لي جاتي ھے جس طرح "قلم" سے ثقافت کو تعبير کيا جاتا ھے?
روايات ميں لفظ "سيف" سے عسکري طاقت مراد ھے
يہ بات بھي واضح ھوجائے ک ھرگز يہ خيال بھي ذھنوں ميں نہ آئے کہ حضرت ظھور کے بعد يکبارگي تلوار اٹھاليں گے اور ايک طرف سے لوگوں کے سرقلم کرنا شروع کرديں گے?
سب سے پہلے دلائل کے ذريعہ حقائق بيان فرمائيں گے? افکار کي رھنمائي فرمائيں گے، عقل کو دعوت نظر ديں گے، مذھب کي اصطلاح ميں سب سے پہلے "اتمام حجّت" کريں گے? جب ان باتوں سے کوئي فائدہ نہ ھوگا اس وقت تلوار اٹھائيں گے?
پھر تو اک برق تباں جانبِ اشرار چلي
نہ چلي بات تو پھر دھوم سے تلوار چلي
اسلام کو اپني حقانيت پر اس قدر اعتماد ھے کہ اگر اسلامي تعليمات واضح طور سے بيان کردي جائيں تو ھر منصف مزاج فوراً تسليم کرلے گا ھاں صرف ھٹ دھرم اور تعصّب کے اندھے قبول نہ کريں گے اور ان کا تو بس ايک علاج ھے اور وہ ھے تلوار يعني طاقت کا مظاھرہ?

طرز حکومت

حضرت مھدي سلام اللہ عليہ کے عالمي انقلاب کے لئے تين مراحل ضروري ھيں:
پہلا مرحلہ:
انتظار? آمادگي? علامتيں
دوسرا مرحلہ:
انقلاب? ظلم و ستم سے پيکار?
تيسرا مرحلہ:
عدل و انصاف کي حکومت کا قيام?
پہلے اور دوسرے مرحلے کے سلسلے ميں گذشتہ صفحات ميں بحث کي جاچکي ھے? اب ھم تيسرے مرحلے بارے ميں بعض اھم باتيں قارئين کي نذر کررھے ھيں?
ايک ايسي دنيا کا تصور انسان کے لئے کتنا زيادہ وجد آفريں، اطمينان بخش اور غرور آميز ھے جہاں طبقاتي اختلافات نہ ھوں، فتنہ و فساد نہ ھو جنگ و خونريزي نہ ھو، فقر و تنگ دستي نہ ھو، غريب کے لاشے پر سامراجيوں کے مستانہ قہقہے نہ ھوں قہقہوں کے گرد ناداروں کي سسکتي آھيں نہ ھوں، نہ دريا دريا فقر ھو اور نہ کشتي کشتي ثروت ……"
ايسي دنيا کا تصور ايک افسانہ ضرور معلوم ھوتا ھے مگر دينِ اسلام نے اس کو يقيني بتايا ھے اور اس کے خطوط بھي ترسيم کيے ھيں?
اسلامي نقطہ نظر سے عالمي حکومت کے چند اھم خطوط ملاحظہ ھوں:

1) علوم کي برق رفتار ترقي

کوئي بھي انقلاب فکري اور ثقافتي انقلاب کے بغير قائم نہيں رہ سکتا ھے? ھر انقلاب کي بقاء کے لئے فکري اور ثقافتي انقلاب ضروري ھے? فکري انقلاب کے دو پہلو ھوں، ايک طرف فکري انقلاب انسانوں کو ان علوم کے سيکھنے پر آمادہ کرے جن کي سماج کو ضرورت ھے اور دوسري طرف صحيح انساني زندگي کے اصول سے واقف کرائے?
حضرت امام جعفر صادق عليہ السلام نے ايک روايت ميں ارشاد فرمايا کہ:
العلم سبع? و عشرون حرفاً فجميع ما جائت بہ الرسل حرفان فلم يعرف الناس حتي اليوم غير الحرفين فاذا قام قائمنا اخرج الخمس? والعشرين حرفاً، فبثھا في الناس و ضم اليھا الحرفين حتي يبثھا سبع? و عشرين حرفاً 25
"علم و دانش کے ستّائيس (27) حروف ھيں (27 شعبے اور حصے ھيں) وہ تمام باتيں جو انبياء عليہم السلام اپني امت کے لئے لائے وہ دو حرف ھيں? اور آج تک تمام لوگ دو حرفوں سے زيادہ نہيں جانتے ھيں ليکن جس وقت ھمارے قائم کا ظھور ھوگا وہ بقيہ 25 حرف (25 شعبے اور حصے) بھي ظاھر فرماديں گے اور ان کو عوام کے درميان پھيلاديں گے اور 25 حرفوں ميں پہلے کے دو حرف بھي شامل کرليں گے اس وقت 27 حرف مکمل طور سے پھيلائے جائيں گے?"
اس حديث سے يہ بات واضح ھوجاتي ھے کہ حضرت کے ظھور کے بعد علم کس برق رفتاري سے ترقي کرے گا? اس زمانے کي علمي ترقي آج تک کي تمام ترقيوں کے مقابلے
ميں بارہ گُنا سے زيادہ ھوگي? اس وقت علوم و فنون کے تمام دروازے کُھل جائيں گے?
حضرت امام محمد باقر عليہ السلام سے ايک روايت نقل ھوئي ھے جس سے گذشتہ حديث کي تکميل ھوتي ھے وہ حديث يہ ھے:
اذا قام قائمنا وضع اللہ يدہ علي رؤوس العباد فجمع بھا عقولھم وکملت بھا احلامھم26
"جس وقت ھمارے قائم کا ظھور ھوگا خداوند عالم بندوں کے سروں پر ھاتھ رکھے گا جس سے ان کي عقليں کامل اور ان کے افکار کي تکميل ھوگي?"
حضرت مھدي سلام اللہ عليہ کي رھبري ميں اور آپ کے وجود کي برکت سے لوگوں کي عقليں کامل ھوجائيں گي? افکار ميں وسعت پيدا ھوجائے گي? تنگ نظري اور کوتاہ فکري کا خاتمہ ھوجائے گا? اور اس طرح وہ چيزيں بھي فنا ھوجائيں گي جو تنگ نظري اور کوتاہ فکري کي پيداوار تھيں?
اس وقت کے لوگ وسيع نظر، بلند افکار، کشادہ دلي، اور خندہ پيشاني کے مالک ھوں گے جو سماج کي مشکلات اپني پاکيزہ روح اور طاھر افکار سے حل کرديں گے?

2) صنعت کي بے مثال ترقي

"فتح کا انداز" کے عنوان کے تحت پہلي، دوسري اور تيسري حديث جو نقل کي ھے اس ميں صنعت اور ٹکنالوجي کي غير معمولي ترقي کي طرف اشارہ کيا گيا ھے?
مواصلات کا نظام اتنا زيادہ ترقي يافتہ ھوجائے گا کہ وسيع و عريض کائنات ہاتھ کي ہتھيلي کي مانند ھوجائے گي، ساري دنيا پر مرکز کي پوري پوري نظر ھوگي تاکہ رونما ھونے والے واقعات کا فوري حل تلاش کيا جاسکے?
روشني اور انرجي کا مسئلہ اس حد تک حل ھوجائے گا کہ لوگ سورج کي روشني کے محتاج نہ رھيں گے?
اس وقت سفر کے ايسے ذرائع ايجاد ھوں گے جن کي تيز رفتاري کا آج ھم تصور بھي نہيں کرسکتے? ايسے ذرائع ھوں گے جس سے زمين کيا آسمان کي وسعتوں ميں بھي سفر کيا جائے گا?
صنعت و ٹکنالوجي کي برق رفتاري کے سلسلے ميں ذيل کي حديث خاص توجہ کي طالب ھے? حضرت امام جعفر صادق عليہ السلام کا ارشاد ھے کہ:
ان قائمنا اذا قام مدّ اللہ بشيعتنا في اسماعھم و ابصارھم حتي? لايکون بينھم و بين القائم بريد يکلمھم فيسمعون وينظرون اليہ وھو في مکانہ 27
"بے شک جس وقت ھمارے قائم کا ظھور ھوگا، خداوند عالم ھمارے شيعوں کي سماعت اور بصارت کو اتنا تيز کردے گا کہ ان کے اور قائم کے درميان کوئي نامہ برنہ ھوگا، وہ شيعوں سے گفتگو کريں گے اور يہ لوگ سنيں گے "اور قائم کي زيارت کريں گے جبکہ وہ اپني جگہ پر ھوں گے?"
اس وقت مواصلات کا نظام اتنا زيادہ ترقي يافتہ ھوجائے گا کہ ھر ايک شخص اس سے استفادہ کرسکے گا، لوگ اپني اپني جگہوں سے حضرت کي زيارت کريں گے اور حضرت کي آواز سنيں گے? اس وقت ڈاک و تار کا نظام غير ضروري چيزوں ميں شمار ھونے لگے گا? پيغام رساني کے لئے ھر ايک کے پاس اپنا ذريعہ ھوگا?!!
اس سلسلہ کي ايک دوسري حديث بھي ملاحظہ ھو? يہ حديث بھي حضرت امام جعفر صادق عليہ السلام سے نقل ھوئي ھے:
ان المومن في زمان قائم وھو بالمشرق سيري اخاہ الذي في المغرب، وکذا الذي في المغرب يري? اخاہ الذي بالمشرق?
قائم کے زمانے ميں مومنين کا حال يہ ھوگا کہ مشرق کے رھنے والے مغرب کے مومنين کو ديکھيں گے اور مغرب کے رھنے والے مشرق کے مومنين کو ديکھيں گے?"
صرف حکومت کے اور عوام کے درميان ھي براہ راست رابطہ نہ ھوگا بلکہ عوام کا بھي ايک دوسرے سے براہ راست رابطہ ھوگا?
اور اس طرح علم و صنعت عدل و انصاف کي بنياد پر سماج کي تشکيل نوکريں گے سماج ميں ھر طرف صدق و صفا، اخوت و برادري کا چرچا ھوگا?

3) اقتصادي ترقياں اور عدالتِ اجتماعي

جس زمين پر ھم زندگي بسر کر رھے ھيں اس ميں اتني صلاحيت ھے کہ وہ موجودہ نسل اور آنے والي نسل کي کفالت کرسکے، ليکن بہت سے منابع کا ھميں علم نہيں ھے اور تقسيم کا نظام بھي صحيح نہيں ھے? يہي وجہ ھے کہ آج غذا کي قلت کا احساس ھورھا ھے اور ھر روز لوگ بھوک سے جان دے رھے ھيں? اس وقت دنيا پر جس اقتصادي نظام کي حکومت ھے وہ ايک استعماري نظام ھے جو اپنے زير سايہ "قانونِ جنگل" کي پرورش کر رھا ھے? وہ لوگ جو زمين ميں پوشيدہ ذخيروں کا پتہ لگاتے، انسانيت کي فلاح و بہبود کي کوشش کرتے ھيں وہ استعمار کي بارگاہ ظلم و استبداد ميں "امن و امان" کي خاطر بھينٹ چڑھا ديے جاتے ھيں?
ليکن جس وقت اس دنيا سے استعماري نظام کا خاتمہ ھوجائے گا اور اسي کے ساتھ ساتھ "قانون جنگل" بھي نابود ھوجائے گا، اس وقت زمين ميں پوشيدہ خزانوں سے بھي استفادہ کيا جاسکے گا، اور نئے ذخيروں کي تلاش ھوسکے گي? علم و دانش بھي اقتصاديات کي بہتري ميں سرگرم رھيں گے?
حضرت مھدي سلام اللہ عليہ کے سلسلے ميں جو روايات وارد ھوئي ھيں ان ميں اقتصاديات کي بہتري کي طرف بھي اشارہ ملتا ھے? ذيل کي سطروں ميں اس سلسلے کي چند حديثيں ملاحظہ ھوں:
انہ يبلغ سلطانہ المشرق والمغرب، وتظھرلہ الکنوز ولا يبقي? في الارض خراب الا يعمّرہ
آپ کي حکومت مشرق و مغرب کو احاطہ کيے ھوگي، زمين کے خزانے آپ کے لئے ظاھر ھوجائيں گے? زمين کا کوئي حصہ غير آباد نہيں رھے گا"?
غير آباد زمينيں افراد، مال يا ذرائع کي کمي کي بنا پر نہيں ھيں بلکہ يہ زمينيں انسان کي ويران کردہ ھيں? ظھور کے بعد انسان تعمير کرے گا تخريب نہيں?
اس سلسلے کي ايک دوسري حديث ملاحظہ ھو? يہ حديث حضرت امام جعفر صادق عليہ السلام سے نقل ھوئي ھے?
اذا قام القائم، حکم بالعدل
وارتفع الجور في ايامہ
وامنت بہ السبل
واخرجت الارض برکاتھا
ورد کل حق الي اھلہ
وحکم بين الناس بحکم داؤد و حکم محمد
فحينئذ تظھر الارض کنوزھا
ولا يجد الرجل منکم يومئذ موضعا لصدقتہ ولا لبرہ
لشمول الغني جميع المومنين
جس وقت ھمارے قائم کا ظھور ھوگا، عدل و انصاف کي بنياد پر حکومت قائم کريں گے ان کے زمانے ميں ظلم و جور نابود ھوجائيں گے?
راستوں پر امن و امان ھوگا،
زمين اپني برکتيں ظاھر کردے گي،
صاحبان حقوق کو ان کے حق مل جائيں گے?
عوام کے درميان جناب داؤد (ع) اور حضرت محمد مصطفے صلي اللہ عليہ وآلہ وسلم کي طرح فيصلہ کريں گے?
اس موقع پر زمين اپنے خزانے ظاھر کردے گي?
کسي کو صدقہ دينے يا مالي امداد کا کوئي موقع نہ ملے گا کيونکہ اس وقت تمام لوگ مستغني ھوچکے ھوں گے?"
زمين کا اپني برکتوں کو اور خزانوں کو ظاھر کردينا بتا رھا ھے کہ اس وقت زراعت بھي عروج پر ھوگي، اور زمين ميں پوشيدہ تمام منابع کا انکشاف ھوگا? عوام کي سالانہ آمدني اتني ھوگي کہ سماج ميں کوئي فقير نہ ھوگا، سب کے سب خود کفيل ھوچکے ھوں گے?
جس وقت عدل و انصاف کي بنياد پر حکومت قائم ھوگي اور ھر شخص کي استعداد سے بھرپور استفادہ کيا جائے گا جس وقت تمام انساني طاقتيں زراعت اور منابع کے انکشاف ميں لگ جائيں گي تو روزانہ نئے خزانے کا انکشاف ھوگا اور ھر روز زراعت ميں ترقي ھوگي? غذائي اشياء کي قلتيں، بھوک، پريشاني وغيرہ کي وجہ غير منصفانہ طرز تقسيم ھے? يہ تقسيم کا نقص ھے کہ کہيں سرمايہ کي بہتات ھے اور کہيں دو لقمہ کو کوئي ترس رھا ھے?
حضرت مھدي سلام اللہ عليہ کے دوران حکومت صرف زراعت ميں ترقي اور زمين ميں پوشيدہ خزانوں ھي کا انکشاف نہ ھوگا بلکہ اس دور ميں شھر اس وقت سے زيادہ آباد ھوں گے، چوڑي چوڑي سڑکيں ھوں گي? عين سادگي کے ساتھ وسيع مسجديں ھوں گي? گھروں کي تعمير اس طرح ھوگي کہ کسي دوسرے کو اس سے کوئي تکليف نہيں پہونچے گي? اس سلسلے ميں چند روايتيں ملاحظہ ھوں:?
1) حضرت امام جعفر صادق عليہ السلام سے روايت ھے:
و يبني? في ظھر الکوفہ مسجدا لہ الف باب و يتصل بيوت الکوفہ بنھر کربلا وبالحيرة 28
"کوفہ کي پشت پر ايک ايسي مسجد تعمير کريں گے جس کے ھزار دروازے ھوں گے اور کوفہ کے مکانات کربلا کي نہر اور حيرہ سے مل جائيں گے"?
سب جانتے ھيں کہ اس وقت کوفہ سے کربلا کا فاصلہ 90 کلوميٹر ھے?
2) حضرت امام محمد باقر عليہ السلام کا ارشاد ھے کہ:
اذا قام القائم يکون المساجد کلھا جمالا شرف فيھا کما کان علي عھد رسول اللہ (ص) و يوسع الطريق الاعظم فيصير ستين ذراعھا ويھدم کل مسجد علي الطريق ويسد کل کوة الي الطريق وکل جناح و کنيف وميزاب الي الطريق 29
"جس وقت حضرت قائم کا ظھور ھوگا اس وقت مسجدوں کي چھوٹي چھوٹي ديواريں ھوں گي، مينار نہيں ھوں گے، اس وقت مسجدوں کي وھي شکل ھوگي جو رسول اللہ کے زمانے ميں تھي? شاھراھيں وسيع کي جائيں گي يہاں تک کہ ان کي چوڑائي ساٹھ گز ھوجائے گي? وہ تمام مسجديں منھدم کردي جائيں گي جو راستوں پر ھوں گي (جس سے آنے جانے والوں کو زحمت ھوتي ھوگي)
وہ کھڑکياں اور جنگلے بھي بند کرديے جائيں گے جو راستوں کي طرف کھلتے ھوں گے?
وہ چھجے، پر نالے اور گھروں کا گندہ پاني جس سے راستہ چلنے والوں کو تکليف ھوگي وہ ختم کرديے جائيں گے?
3) حضرت امام جعفر صادق عليہ السلام سے ايک طولاني حديث ميں وارد ھوا ھے کہ:
… وليصيرن الکوفہ اربع? وخمسين ميلا وليجارون قصورھا کربلا وليصيرن اللہ کربلا معقلا ومقاما ……" 30
"وہ کوفہ کي مسافت 54 ميل کرديں گے، کوفہ کے مکانات کربلا تک پہونچ جائيں گے، اور خدا کربلا کو سرگرميوں کا مرکز قرار دے گا?"
زراعت، تعميرات، آبادکاري وغيرہ کے سلسلے ميں کافي مقدار ميں روايتيں وارد ھوئي ھيں? مزيد روايتوں کے لئے "منتخب الاثر" کا مطالعہ کيا جاسکتا ھے?

4) عدليہ

ظلم و جور، ستم و استبداد نا انصافي و نا برابري کا قلع قمع کرنے کے لئے جہاں ايمان و اخلاق کي سخت ضرورت ھے وھاں صحيح نظام کے لئے طاقت ور عدليہ کي بھي ضرورت ھے?
صنعت اور ٹکنالوجي کي ترقي کي بنا پر يہ ممکن ھوجائے گا کہ انسانوں کي حرکات و سکنات پر نظر رکھي جاسکے? ان اقدامات پر پابندي عائد کي جاسکے جو فساد کي خاطر کئے جاتے ھيں? مجرموں کي آوازيں ٹيپ کرنا، ان کے خفيہ اعمال کي تصوير لينا … ان چيزوں سے مجرموں پر گرفت مضبوط ھوجائے گي? مجرموں کي نگراني کامياب حکومت کے لئے بہت ضروري ھے?
اس ميں کوئي شک نہيں کہ حضرت کے زمانے ميں اخلاقي تعليمات اتني عام ھوجائيں گي کہ عوام کي اکثريت سعادتمند معاشرے کي تشکيل کے لئے آمادہ ھوجائے گي? عوام کو اخلاقي تربيت سے سماج کے کافي مسائل حل ھوجائيں گے?
ليکن انسان آزاد پيدا کيا گيا ھے? اپنے اعمال ميں اسے پورا اختيار حاصل ھے? اس لئے اس بات کا امکان ضرور ھے کہ ايک صحت مند سماج ميں ايسے افراد پائے جائيں جو خواہ مخواہ فساد پھيلانا چاھتے ھوں?
اس بنا پر سماج کي مکمل اصلاح کے لئے وسيع الاختيار عدليہ کي ضرورت ھے تاکہ مجرموں کو ان کے جرم کا بدلہ ديا جاسکے?
جرائم کے علل و اسباب پر غور کرنے سے معلوم ھوتا ھے کہ بہت سے جرائم کو ان طريقوں سے روکا جاسکتا ھے:

1) عادلانہ تقسيم

ضروريات زندگي کي عادلانہ تقسيم سے کافي جرائم ختم ھوجاتے ھيں? عادلانہ تقسيم سے طبقاتي کش مکش ختم ھوجاتي ھے? ذخيرہ اندوزي، چور بازاري، گراں فروشي، اور سرمايہ داروں کي ناروا سختياں نيز سرمايہ دارون کي باھمي چپقليش … سب کافي حد تک ختم ھوجائيں گي?

2) صحيح تربيت

صحيح تربيت بھي مفاسد اور جرائم کي روک تھام ميں کافي موثر ھے? اس وقت دنيا ميں فساد کي گرم بازاري، جرائم کي فراواني اس وجہ سے ھے کہ تعليم کے لئے تو ضرور نئے نئے طريقے اختيار کئے جارھے ھيں ليکن تربيت کا کوئي معقول انتظام نہيں ھے? تعليم کو صحيح راستے پر لگانے کے بجائے تعليم سے فساد کي شاھراہ تعمير کي جارھي ھے غير اخلاقي فلميں، ڈرامے، کتابيں، اخبار، رسالے سب انسان کے اخلاقيات پر حملہ آور ھيں?
ليکن جب تعليم کے ساتھ ساتھ تربيت کا بھي جديد ترين معقول انتظام ھوگا، عالمي حکومت انسانوں کي تربيت پر بھرپور توجہ دے گي? وہ مفاسد اور جرائم خود بخود ختم ھوجائيں گے جن کا سرچشمہ عدم تربيت يا ناقص تربيت ھے?

3) طاقت ور عدليہ

ايک ايسي عدليہ کا وجود جس سے نہ مجرم فرار کرسکتا ھے اور نہ فيصلوں سے سرتابي اس وقت دنيا کے ھر ملک ميں عدليہ موجود ھے? ليکن يا تو عدليہ کي گرفت مجرم پر مضبوط نہيں ھے يا عدليہ ميں صحيح فيصلے کي صلاحيت نہيں ھے، يا دونوں ھي نقص موجود ھيں بلکہ بعض مجرم عدليہ کي شہ پر جرم کرتے ھيں?
ليکن ايک ايسي عدليہ جس کي گرفت بھي مجرم پر سخت ھو اور جو فيصلوں ميں رو رعايت نہ کرتي ھو، فساد اور جرائم کے انسداد ميں ايک اھم کردار ادا کرتي ھے?
اگر يہ تينوں باتيں يکجا ھوجائيں، عادلانہ تقسيم? صحيح تربيت اور طاقت ور عدليہ تو آپ خود فيصلہ کرسکتے ھيں کہ کتنے عظيم پيمانے پر جرائم کا سد باب ھوجائے گا اور سماج کي اصلاح ميں کس قدر موثر اقدام ھوگا?
روايات سے استفادہ ھوتا ھے کہ حضرت مھدي سلام اللہ عليہا کے زمانہ? حکموت ميں يہ تينوں عوامل اپنے عروج پر ھوں گے?

مدّتِ حکومت

احاديث ميں حضرت کي حکومت کے سلسلے ميں مختلف روايتيں ملتي ھيں? روايتيں 5 سال سے 309 سال (جتنے دنوں اصحاب کہف غار ميں سوتے رھے) تک ھيں? يہ مختلف اعداد ھوسکتا ھے کہ حکومت کے مختلف مراحل کي طرف اشارہ کر رھے ھوں مرحلہ انقلاب مرحلہ استحکام اور مرحلہ حکومت ان تمام باتوں سے قطع نظر يہ ايک حقيقت ھے کہ مُدّتوں کا انتظار، يہ تيارياں، يہ مقدمات کسي ايسي حکومت کے لئے زيب نہيں ديتے جس کي عمر مختصر ھو? حضرت کي حکومت کي عمر يقيناً طولاني ھوگي تاکہ ساري زحمتيں ثمر آور ھوسکيں ويسے حقائق کا علم ذاتِ احديت کو ھے?


 
1. تفصيلي بحث کے لئے ملاحظہ ھو "منتخب الاثر" تحرير آيت الله لطف اللہ صافي? ص231? 236
2. بحار الانوار ج 52 ص125 طبع جديد
3. بحار الانوار ج 52 ص 126
4. بحار الانوار جلد 52 ص 126
5. بحار الانوار ج 52 ص 142 طبع جديد
6. بحار الانوار ج 52 ص 122
7. بحار الانوار ج 52 ص 142
8. بحار الانوار ج52 ص128
9. بحار الانوار ج52 ص125
10. بحار الانوار، جلد51 ص74 طبع جديد
11. بحار الانوار ج51، ص58 طبع جديد
12. بحار الانوار جلد52 ص256 تا 260
13. دجال? دجل (بروزن درد. سے ھے جس کے معني ھيں دروغ گوئي اور دھوکہ بازي?
14. صحيح ترمذي? باب ماجاء في الدجال ص42
15.رسالہ دوم يوحنا? باب 1 جملہ 6? 7
16. بحار الانوار ج52 ص209
17. بحار الانوار ج52 ص192 صعصعہ بن صفوان کي حديث سے اقتباس?
18. بحار الانوار ج52 ص182 تا 209
19. بحار الانوار ج52 ص182
20. بحار الانوار ج52 ص190
21. يہ روايت تفسير "برھان" ميں اس آيہ کريمہ کے ذيل ميں نقل ھوئي ھے: وقل اعملوا فسيري اللہ عملکم ورسولہ والمومنون (سورہ? توبہ آي? 105.
22. بحار الانوار ج52 ص330
23. بحار الانوار ج52 طبع جديد ص328
24. بحار الانوار ج52 طبع جديد ص 321
25. بحار الانوار ج52 ص336?
26. بحار الانوار ج52 ص328
27. بحار الانوار ج52 ص336
28. بحار الانوار ج52 ص330
29. بحار الانوار ج13 ص186 مطبوعہ امين الضرب
30. سابق مآخذ
پایگاه اطلاع رسانی دفتر مرجع عالیقدر حضرت آیت الله العظمی مکارم شیرازی
سامانه پاسخگویی برخط(آنلاین) به سوالات شرعی و اعتقادی مقلدان حضرت آیت الله العظمی مکارم شیرازی
تارنمای پاسخگویی به احکام شرعی و مسائل فقهی
انتشارات امام علی علیه السلام
موسسه دارالإعلام لمدرسة اهل البیت (علیهم السلام)
خبرگزاری دفتر آیت الله العظمی مکارم شیرازی

الامام علي (ع)

الصيام اجتناب المحارم کما يمتنع الرجل من الطعام و الشراب

روزه دوري کردن از حرام ها است همچنان که مرد از خوردن و آشاميدن خودداري مي کند

ميزان الحکمة 6/394